میں افسانہ ہوں.. کردستان سے تعلق رکھنے والی ایک لڑکی.... مجھے ایرانی انٹیلی جنس نے جنسی تشدد کا نشانہ بنایا: کرد لڑکی کا علی خامنہ ای کے نام خط

میں افسانہ ہوں.. کردستان سے تعلق رکھنے والی ایک لڑکی.... مجھے ایرانی انٹیلی جنس ...
میں افسانہ ہوں.. کردستان سے تعلق رکھنے والی ایک لڑکی.... مجھے ایرانی انٹیلی جنس نے جنسی تشدد کا نشانہ بنایا: کرد لڑکی کا علی خامنہ ای کے نام خط

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

تہران (ڈیلی پاکستان آن لائن) ایرانی مرشد اعلیٰ علی خامنہ ای کے نام خط کے باعث کرد لڑکی کو چار سال کی سز ا دے دی گئی۔ جیل سے لکھا جانے والا خط ایرانی ویب سائٹس پر وائرل ہوگیا۔ خط میں افسانہ نامی کرد لڑکی نے اپنے اور بقیہ خواتین قیدیوں کے ایرانی انٹیلی جنس اور جیل کے ذمے داران کے ہاتھوں تشدد اور انسانی حقوق کی پامالیوں کا نشانہ بننے کا ذکر کیا تھا۔خاتون نے الزام عائد کیا کہ ایرانی انٹیلی جنس کے اہلکار اسے اور دیگر خواتین کو جنسی تشدد کا نشانہ بھی بناتے رہے ہیں۔

’مجھے 500 روپے بھیجو پھر دیکھو کیا کرتی ہوں‘ نوجوان لڑکی انٹرنیٹ پر مَردوں کو پیغام دینے لگی، رقم ملنے کے بعد کیا کرتی ہے؟ جان کر مَرد شرم سے پانی پانی ہوگئے

تفصیلات کے مطابق  افسانہ نامی کرد خاتون کارکن نے اپنے ایک خط میں گرفتاری اور قید کے حالات کا ذکر کرتے ہوئے لکھا تھا " میں افسانہ ہوں.. کردستان سے تعلق رکھنے والی ایک لڑکی.. میں نے انفرادی قید خانے میں 90 روز گزارے.. اس پورے عرصے میں مجھے مختلف انداز اور نوعیت کے تشدد کا نشانہ بنایا گیا"۔

’اس خاتون نے مجھے سمگلروں کے ذریعے اپنے گھر منگوایا اور پھر دو سال تک مجھے قید کرکے حاملہ کرنے کی کوشش کرتی رہی کیونکہ۔۔۔‘

متعدد ایرانی ویب سائٹوں پر جاری کیے گئے خط میں کرد سیاسی اسیر نے خامنہ ای کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ " میں تمہیں ایک ایسے شخص کے طور پر مخاطب کر رہی ہوں جس نے 38 برس سے خود کو زمین پر اللہ کے خلیفہ کے طور پر پیش کیا ہوا ہے۔ تم نے اسلام اور مذہب کے نام پر ایرانی عوام اور قومیتوں کو غلام بنا رکھا ہے۔ میں تمہیں باور کرانا چاہتی ہوں کہ مجھے اور مجھ جیسی دیگر خواتین قیدیوں کو جیل میں جس نوعیت کے تشدد ، آبرو ریزی اور دم گھونٹے جانے کا سامنا کرنا پڑا ہے اس کو میں ہر گز فراموش نہیں کروں گی۔ ایک دن آئے گا جب ہم تمہیں اور تمہارے شراکت داروں کا احتساب کریں گے۔

’اگلی مرتبہ جب میں ہوائی سفر کروں گی تو جہاز میں برہنہ جاﺅں گی کیونکہ۔۔۔‘ معروف ماڈل نے اعلان کردیا، کھلبلی مچادی

 افسانہ با یزیدی کو طلبہ تحریکوں میں سرگرم رہنے کی وجہ سے 4 برس قید کی سزا کا سامنا ہے۔ انسانی حقوق کے دفاع سے متعلق کرد تنظیم کی ویب سائٹ پر جاری خط میں افسانہ نے بتایا کہ " محض کرد ہونا ہی ناقابلِ معافی جرم ہے کیوں کہ آپ فطری دشمن ہیں۔ آپ کو ایرانی شہری شمار نہیں کیا جاتا"۔

’میری عمر 94 برس ہے اور پچھلے 44سالوں سے میں مسلسل روزانہ میکڈونلڈز کھارہی ہوں جس کی وجہ سے اب۔۔۔‘ 94 سالہ بڑھیا نے ایسی بات کہہ دی کہ دنیا بھر کے نوجوانوں کے منہ کھلے کے کھلے رہ گئے
العربیہ ٹی وی کے مطابق افسانہ کا مزید کہنا تھا کہ " گرفتاری کے ابتدائی ایام میں ہی مجھے تشدد اور زدوکوب کا نشانہ بنایا گیا جس کے نتیجے میں میرا اپنے قدموں پر چلنا بھی ممکن نہ رہا۔ میرے دونوں پاؤ ں اور کمر شدید پٹائی کے نتیجے میں سوج کر رنگ بدل چکی تھی اور میرے سر اور منہ سے خون جاری تھا۔ اس کے بعد مجھے بدترین حالت میں ارومہ شہر میں انٹیلی جنس کی ڈسپنسری پہنچایا گیا جہاں میں نے 15 روز گزارے۔