حویلی بہادر شاہ پاور پلانٹ تکمیل کے قریب‘ ریلائبلٹی ٹیسٹ مکمل ہو گیا

حویلی بہادر شاہ پاور پلانٹ تکمیل کے قریب‘ ریلائبلٹی ٹیسٹ مکمل ہو گیا

  

لاہور ( پ ر)سیپکوIII اور جی ای پاور(NYSE: GE) نے جھنگ میں حویلی بہادر شاہ پاور پلانٹ کا ریلائبلٹی رن ٹیسٹ(RRT) کامیابی سے مکمل کر لیا ہے۔آر آر ٹی اس پلانٹ کی کامیابی کی جانب ایک اہم سنگ میل ہے جو نیشنل پاور پاور پارکس مینجمنٹ کمپنی لمیٹڈ(NPPMCL) کے ذریعے حکومت پاکستان کی جانب سے تعمیر کیا جا رہا ہے۔یہ پراجیکٹ ملک میں گیس سے چلنے والے سب سے بڑے کمبائنڈ سائیکل پلانٹس میں سے ایک ہے۔توقع ہے کہ یہ پاکستان کی نیشنل گرڈ میں 1,230 میگا واٹس(MW) بجلی شامل کرے گا جو2.5 ملین گھروں کی بجلی کی ضروریات پوری کرنے کے لیے کافی ہے۔سیپکوIII الیکٹرک پاور کنسٹرکشن کمپنی لمیٹڈ، اس پراجیکٹ کی انجنیئرنگ پروکیورمنٹ اینڈکنسٹرکشن (ای پی سی)کنٹریکٹر ہے اور پاور پلانٹ کی تعمیر کی ذمہ دار ہے۔سیپکوIII پاور کنسٹرکشن کارپوریشن آف چائنا کی مکمل ملکیتی سبسڈری ہے اور اس کے پروفیشنل انجنیئرنگ انٹرپرائز میں ای ہی سی او، ای پی سی، بی او ٹی، بی او او اور پی ایم سی شامل ہیں۔1985 میں قائم کی جانے والی سیپکوIII کی مجموعی نصب شدہ گنجائش 86,000 میگا واٹ ہے اور2014 میں یہ دنیا کی 250 سرکردہ انٹر نیشنل کنٹریکٹر آف ENGR (انجنئرنگ نیوز ریکارڈ)میں58 ویں نمبر پر تھی۔اس وقت اس کی کسٹمر بنیاد بھارت، نائیجریا، پاکستان، بنگلہ دیش، کویت ، میانمار، اردن، سعودی عرب، اومان، عراق، مصر، مراکش، ترکی ،انڈونیشیا اور سنگا پور سمیت46 اہم پراجیکٹس کے ذریعے18 ملکوں تک پھیلی ہوئی ہے۔جی ای، اس پلانٹ کے لیے دو جدید ترین ایچ کلاس ہیوی ڈیوٹی گیس ٹربائنز---- اسٹیم ٹربائن اور ہیوی ریکوری اسٹیم جنریٹرز(HRSGs) فراہم کر رہی ہے۔این پی پی ایم سی ایل کے سی ای او،راشد محمود لنگڑیال نے کہا کہ" ہم صنعتی افزائش، اقتصادی ترقی اور عوام کی فلاح و بہبود کو آگے بڑھانے کے لیے پاکستان میں بجلی کی بڑھتی ہوئی مانگ کو پورا کرنے کے لیے پر عزم ہیں" ۔

انھوں نے کہا کہ" مجھے یہ دیکھ کر خوشی ہوئی ہے کہ ہم سیپکوIII اور جی کے ساتھ مل کر کام کرتے ہوئے کوالٹی اور عمدہ مہارت کے اعلیٰ ترین معیارات کو برقرار رکھتے ہوئے حویلی بہادر شاہ پراجیکٹ قائم کر رہے ہیں۔یہ فیسلٹی جلد ہی ملک میں بجلی کی20 فیصد کمی کو پورا کرنے میں مدد دے گی" ۔ایچ بی ایس سائیٹ پر آر آر ٹی میں اصل حالات کے تحت کسی رکاوٹ کے بغیر سات روز کی مدت کے لیے پلانٹ آپریشنز جاری رکھے گئے۔آر آر ٹی کی کامیاب تکمیل ظاہر کرتی ہے کہ پاور پلانٹ حفاظت کے اعلیٰ ترین معیارات کے مطابق کام کر رہا ہے۔ یہ سائیٹ پر تنصیب کی تمام بڑی سرگرمیوں کی تکمیل کو بھی ظاہر کرتا ہے۔آر آر ٹی کے بعد پاور پلانٹ پرفارمنس ٹیسٹ سے گزرے گا، جس میں پیداواری اور ایفی شینسی سطحوں جیسے پرفارمنس سے متعلق اہم انڈیکیٹرز کو جانچنے کے لیے خصوصیCalibrated Instrumentation استعمال کی جائے گی۔پرفارمنس ٹیسٹ اپریل2018 میں ہونے کی امید ہے،جس لے بعد پلانٹ مکمل پیمانے پر کمرشل آپریشنز تک پہنچ جائے گا اور2018 کی گرمیوں سے قبل نیشنل گرڈ کو بجلی فراہم کرنے لگے گا۔ایچ بی ایس کے پراجیکٹ ڈائریکٹر،وان زینگ ژو نے کہا کہ" حویلی بہادر شاہ پاور پلانٹ کی تکمیل میں 35 ملکوں سے آنے والے اسٹاف نے فٹ بال کے65 میدانوں جیسی وسیع و عریض جگہ پر دس ملین انسانی گھنٹوں سے زیادہ وقت کام کیا۔یہ پراجیکٹ دنیا کی بہترین انجنیئرنگ مہارت، جدید امریکی اور یورپی ٹیکنالوجیز اور زمینی حالات کا علم رکھنے والے مقامی اسٹاف کو ایک جگہ اکٹھا کر کے ہم پاکستان کا موثر ترین کمبائنڈ سائیکل پاور پلانٹ تعمیر کر رہے ہیں" ۔جی ای گیس پاور سسٹمز---- مشرق وسطیٰ، بھارت اور پاکستان کے پریذیڈنٹ اور سی ای او محمد علی نے کہا کہ" پاکستان کی تعمیر و ترقی میں ایک پر عزم شراکت دار کی حیثیت سے ہمیں اس بات کا ادراک ہے کہ ملک کی بڑھتی ہوئی بجلی کی ضرورت کو پورا کرنے کے لیے جدید ترین ٹیکنالوجی لانا کس قدر اہم ہے۔۔جی ای کے ایچ اے نے گیس ٹربائنز نے فرانس میں کمبائنڈ سائیکل پاور پلانٹ ایفی شینسی کے لیے ورلڈ ریکارڈ قائم کرنے میں مدد دی ہے اور ہمیں موثر ، با کفایت، قابل انحصار اور پائیدار بجلی پاکستان لا کر،یہاں ایک نیا صنعتی معیار قائم کرنے میں مدد دینے پر فخر ہے" ۔

مزید :

کامرس -