700سے زائد درآمدی اشیاء پر عائد ریگولیٹری ڈیوٹی غیر قانونی قرار

700سے زائد درآمدی اشیاء پر عائد ریگولیٹری ڈیوٹی غیر قانونی قرار

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے اکتوبر 2017ء میں 700 سے زائد درآمدی اشیاء پر عائد کی گئی ریگولیٹری ڈیوٹی غیر قانونی قراردے دی ہے ۔مسٹرجسٹس شاہد کریم نے اس سلسلے میں دائر درخواستیں منظور کرتے ہوئے وزارت خزانہ کا 16اکتوبر2017ء کو جاری کیا گیا نوٹیفکیشن کالعدم کردیا ہے ۔اس نوٹیفکیشن میں میک اپ کے سامان ،سرامکس ،کپڑے اوراشیاء خوردونوش سمیت مختلف آئٹمز پر 5سے 40فیصد تک ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کی گئی تھی ،جن اشیاء پر یہ ڈیوٹی عائد کی گئی تھی ان میں پولٹری ، مختلف اقسام کی مچھلی ،ڈیری پراڈکٹس ،زیتون اور زیتون کا تیل ،مختلف نوعیت کے پھل ،گندم ،آف لیور ،سبزیات ،ترشاوے پھل ،سویا ،مختلف قسم کے شربت ،بیئر ،سگریٹ ،پرفیوم ،میک اپ کا سامان، شیمپو،بال رنگنے والے کیمیکلز ،پلاسٹک کی اشیاء ، پولی تھائیلین، کاٹن یارن ،مختلف اقسام کے دھاگے ،پولیسٹر ، ویمن فیبرکس ،مردانہ کوٹ ،ٹوپیاں ،جیکیٹیں اور دیگر کپڑے ،سنگ مرمر کی اشیاء ،ٹوائلٹ سرامکس ،ٹائلیں وغیرہ شامل تھیں ۔ جسٹس شاہد کریم نے سی این ایس انجینئرنگ سمیت مختلف افراد اور اداروں کی طرف سے دائر درخواستوں پر فیصلہ سنادیاہے۔درخواست گزاروں کے وکیل محسن ورک کی طرف سے موقف اختیار کیا گیا تھا کہ درآمدی اشیاء پر ڈیوٹی عائد کرنے سے قبل وفاقی کابینہ کی منظوری نہیں لی گئی، وکیل نے اعلیٰ عدلیہ کے فیصلوں کا حوالہ دیا اور بتایا کہ سپریم کورٹ نے درآمدی اشیاء پر ریگولیٹری ڈیوٹی کیلئے وفاقی کی کابینہ منظوری لازم قرار دے رکھی ہے، وکیل نے مزیدبتایا کہ وفاقی کابینہ کی منظوری کے بغیر ڈیوٹی نافذ کرنا نہ صرف قانون کی منشا ء کے برعکس ہے بلکہ عدالتی فیصلوں سے انحراف کے بھی مترادف ہے، وکیل نے استدعا کی کہ وفاقی کابینہ کی اجازت کے بغیر درآمدی اشیاء پر ریگولیٹری ڈیوٹی کے نفاذ کو کالعدم قرار دیا جائے، وکیل نے مزید کہا کہ کسٹمز ایکٹ کی دفعہ 18 کی ضمنی دفعہ 3 کے تحت ڈیوٹی کے نفاذ کا نوٹیفکیشن کالعدم کیا جائے ،وفاقی حکومت کے وکیل نے درخواستوں کی مخالفت کی اور بتایا کہ ایف بی ار کو انچارج وزیر کی منظوری سے ٹیکس لگانے کا اختیار ہے،عدالت نے درخواستوں پر فیصلہ سناتے ہوئے درآمدی اشیاء پر ریگولیٹری ڈیوٹی کو کالعدم قرار دے دیاہے۔

ریگولیٹری ڈیوٹی

مزید : صفحہ اول