بونیر میں غیر قانونی مقیم افغان مہاجرین عوام کیلئے درد سر

بونیر میں غیر قانونی مقیم افغان مہاجرین عوام کیلئے درد سر

بونیر(ڈسٹرکٹ رپورٹر)بونیر ضلع میں غیر قانونی طور پر مقیم افغان مہاجرین مقامی لوگوں کے لئے درد سر بن گئے ہیں ۔افغان مہاجرین کے پاس مشکوک لوگ اتے اور یہی افغان مہاجرین غیر قانونی کاموں میں مصروف ہوتے ہیں ۔مقامی پولیس نے ڈگر میں رہائش پذیر افغان مہاجر کو چرس کے سمگلنگ میں گرفتار کرکے جیل بھیج دیا ۔ایف ائی اے حکام نے بنائے گئے پاکستانی شناحتی کارڈ بلاک کردئے ہیں ۔مرکزی حکومت ڈگر گاؤں میں غیر قانونی طور پر رہائش پذیر افغان مہاجرین کو مہاجر کیمپ منتقل کرے ۔یا اسے اپنے ملک روانہ کرے ورنہ مقامی لوگ مزید ان کو برداشت نہیں کریں گے ۔تفصیلات کے مطابق ڈگر گاؤں سے تعلق رکھنے والے امیر عزن ولد مخوزے نے مقامی صحافیوں کو تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ انکے محلہ میں عرصہ دراز سے مقیم افغان مہاجر عبدالحافظ ولد عبدالمالک نے اپنی بیوی ،چار بیٹوں اور پانچ بیٹیوں کے پاکستان شناحتی کارڈ بنوائے تھے ۔جس پر ایف ائی اے حکام نے کاروائی کرتے ہوئے انکے شناحتی کارڈ ز بلاک کردئے ۔انہوں نے کہا کہ یہ افغان خاندان افغانستان بھی جاتے ہیں اور افغانستان سے انکے رشتہ دار بھی یہاں اتے ہیں ۔جس میں بعض افراد مشکوک ہوتے ہیں ۔چونکہ پاکستان میں موجودہ ھالات کی پیش نظر غیر قانونی طور رہنا ٹھیک نہیں ہے ۔22/3/018 گاگرہ پولیس نے عبدالحافظ کے بیٹے مشتاق احمد کو گیارہ سو گرام چرس سمگل کرتے ہوئے گرفتار کیا تھا ۔اور اسکے خلاف ایف ائی اردرج کی تھی ۔امیر عزن کے مطابق افغان خاندان نے کسی کے نام پر زمین بھی خرید ی ہیں ۔انہوں نے ڈپٹی کمشنر بونیر اور دیگر اعلی حکام سے مطالبہ کیاہے کہ گاؤں ڈگر میں رہائش پذیر افغان مہاجر خاندان کو فوری طور پر یہاں سے افغان مہاجر کیمپ منتقل کیا جائے ۔انہوں نے کہا کہ ان کے خلاف مقامی پولی نے جو پرچے کئے ہیں انکے نقول میرے پاس موجود ہیں ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر