اسلام میں ووٹ کی شرعی حیثیت اور ہمارا کردار    

اسلام میں ووٹ کی شرعی حیثیت اور ہمارا کردار    
اسلام میں ووٹ کی شرعی حیثیت اور ہمارا کردار    

  

 پاکستان کا پورا نام اسلامی جمہوریہ پاکستان ہے ۔ یعنی ایک اسلامی ملک ہے اور اس کی95سے97فیصد آبادی مسلمان ہے ۔ پاکستان کے آئین کے مطابق اس ملک کا کوئی قانون اسلام کے منافی نہیں ہو سکتا۔ ایک جمہوری ملک ہونے کے ناطے ووٹ کی حیثیت کو پاکستان میں بہت اہمیت حاصل ہے ۔ الیکشن میں ووٹ کے ذریعے عوام اپنے ان نمائندوں کو منتخب کرتے ہوئےاپنا پیارا ملک ان کے حوالے کرتی ہے ۔ لیکن اپنے ووٹ کے استعمال سے پہلے ان نمائندوں کی اہلیت، قابلیت اور ملک چلانے کی صلاحیت کے متعلق نہیں سوچا جاتا ، بلکہ دیکھا جاتا تو صرف یہ کہ کون ہمارے ووٹ کی کتنی قیمت لگا رہا ہے۔ ووٹ کی یہ قیمت رقم کی صورت میں بھی ہو سکتی ہے ، گلی، نالی، بجلی، گیس اور تھانے کچہری کی وعدےیا پھر کسی تعلق کی صورت میں بھی قیمت ہو سکتی ہے ۔ قیمت جیسی بھی ہو ہم نے تو اپنا ووٹ بیچنا ہی ہوتا ہے ۔ 

ووٹ کو اگر اسلامی شرعی نقطہ نظر سے دیکھیں تو اس کی تین حیثیتں نظر آتی ہیں۔ شہادت، شفاعت یا سفارش، اور وکالت۔ شہادت کے معنی گواہی کے ہیں یعنی جب آپ کسی امیدوار  کو ووٹ دیتے ہیں تو اس بات کی گواہی دیتے ہیں کہ وہ ایک اچھا انسان ہے، چور ،ڈاکو یا کرپٹ طبقہ سے تعلق نہیں رکھتا۔ اس کے صادق و امین ہونے کی گواہی ووٹ کے ذریعے دے رہے ہوتے ہیں۔ قرآن مجید میں گواہی کے متعلق اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں

یٰٓاَیُّہَاالَّذِیْنَ اٰمَنُوْا کُوْنُوْا قَوَّامِیْنَ بِالْقِسْطِ شُہَدَآءَِ ﷲِ وَلَوْ عَلٰٓی اَنْفُسِکُمْ اَوِالْوَالِدَیْنِ وَالْاَقْرَبِیْنَج (النساء ۴:۱۳۵)

اے ایمان والو! تم انصاف پر مضبوطی کے ساتھ قائم رہنے والے (محض) اللہ کے لیے گواہی دینے والے ہو جاؤ خواہ (گواہی) خود تمہارے اپنے یا (تمہارے) والدین یا (تمہارے) رشتہ داروں کے ہی خلاف کیوں نہ ہو ۔

چھوٹی گواہی دینے کی صورت میں اسلام میں اس کا جو گناو و سزا ہے ووٹ دینے والا اس کا مستحق ہو گا ۔ ووٹ کی دوسری حیثیت شفاعت یا سفارش اس لحاظ سے کہ آ پ اپنے ووٹ کی طاقت کو استعمال کرتے ہوئے اپنے منتخب کردہ امیدوار کو پاکستان کی باگ دوڑ سنبھالنے کیلئے ایک موقع دینے کی سفارش کر رہے ہوتے ہیں۔ سفارش کے متعلق قرآن مجید میں ارشادِ باری تعالیٰ ہے 

مَنْ یَّشْفَعْ شَفَاعَۃً حَسَنَۃً یَّکُنْ لَّہٗ نَصِیْبٌ مِّنْہَاج وَمَنْ یَّشْفَعْ شَفَاعَۃً سَیِّءَۃً یَّکُنْ لَّہٗ کِفْلٌ مِّنْہَاط (النساء ۴:۵۸)

  "جو شخص کوئی نیک سفارش کرے تو اس کے لیے اس (کے ثواب) سے حصہ (مقرر) ہے، اور جو کوئی بری سفارش کرے تو اس کے لیے اس (کے گناہ) سے حصہ (مقرر) ہے،۔"

اگرآپ جانتے ہیں کہ جس کو ووٹ دے رہے ہیں وہ اس قابل نہیں کہ ملک کے کسی ایک ادارہ یا کسی ایک شعبہ کی کو سنبھال سکے تو غلط اور ناجائز سفارش سے نقصان نہ صر ف آ پ کی حد تک رہے گا بلکہ ملک پاکستان کے ادارے بھی نااہل قیادت کے باعث کمزور ہوں گے۔ ووٹ کی تیسری حیثیت وکالت اس لحاظ سے ہے کہ جس امیدوار کو آپ ووٹ دے کر اپنا وکیل مقرر کر رہے ہوتے ہیں۔ آپ کا نمائندہ ہونے کے ناطے پاکستان کے اعلی عہدوں پر فائز ہو کر ملک و قوم کی ترقی کے ذمہ دار ہوتے ہیں ۔ اس کے اچھے یا برے فیصلے میں بطور اس کے ووٹرآپ برابر کے شریک ہوتے ہیں۔ 

قرآن مجید کی تعلیمات کی روشنی میں ہمیں ووٹ کوایک مقدس فریضہ سمجھتے ہوئے اد اکرنا ہو گا ۔ ووٹ دیتے ہوئے اپنے ذہین میں اس بات کو رکھنا ہو گا کہ قیامت کے روز ہم سے جہاں نماز، روزہ، حج زکوۃ کے بارے میں سوال ہوں گے وہاں ووٹ کے ذریعے دی گئی گواہی اور سفارش کا بھی پوچھا جائے گا ۔  ہمیں ذات پات، برادری اور تعلق سے ہٹ کر امیدوار کی قابلیت ، وطن سے محبت اور اس کے کردار کو دیکھتے ہوئے اپنے ووٹ کا استعمال کرنا ہو گا۔ تو ہی اس ملک میں ترقی کے دروازے کھلیں گے اور امن کی ہوا چلے گی ۔

۔

نوٹ: روزنامہ پاکستان میں شائع ہونے والے بلاگز لکھاری کا ذاتی نقطہ نظر ہیں,ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں۔

مزید :

بلاگ -