آسٹریا میں 14 سالہ دہشت گرد کو سزا

آسٹریا میں 14 سالہ دہشت گرد کو سزا

اویانا (آن لائن)آسٹریا میں ایک 14 سالہ لڑکے کو دہشت گرد گروہ اسلامک اسٹیٹ میں شمولیت کی منصوبہ بندی اور ویانا میں ایک بم دھماکا کرنے کی منصوبہ سازی کے الزام میں 8 ماہ قید کی سزا سنا دی گئی ہے۔ سینٹ پیولٹن کی ایک عدالت نے اس 14 سالہ لڑکے کے خلاف جرم ثابت ہونے پر سزا سنائی۔ آسٹریا کی وزارت داخلہ کے ایک ترجمان کے مطابق ملک سے دو سو افراد شام اور عراق میں دہشت گرد گروہ اسلامک اسٹیٹ کے ساتھ مل کر لڑنے کے لیے گئے، جن میں سے ایک چوتھائی نابالغ تھے۔ترکی میں پیدا ہونے والے اس 14 سالہ لڑکے نے عدالت کے سامنے اعتراف کیا کہ وہ گزشتہ برس ویانا میں اسلامک اسٹیٹ کے ایک رکن سے ملا اور اس کے ساتھ اس نے وعدہ کیا کہ وہ ویانا میں بم حملہ کر کے شام چلا جائے گا۔اس لڑکے کے اسکول والوں نے اس کے شدت پسندانہ رویے کو دیکھتے ہوئے پولیس کو مطلع کر دیا اور گزشتہ برس اکتوبر میں اسے حراست میں لے لیا گیا۔تفتیش کاروں کے مطابق اس لڑکے نے آن لائن طریقے سے بم سازی کے لیے مواد جمع کیا اور اس کا منصوبہ تھا کہ یہ ویانا کے مغربی ٹرین اسٹیشن کو بم حملے کا نشانہ بنائے۔

اس کام کے لیے اس نے اپنے ایک 12 سالہ دوست کو بھی اپنے ساتھ شامل کرنے کی کوشش کی۔عدالت نے اس 14 سالہ ملزم کو دہشت گرد تنظیم میں شمولیت اور دہشت گردانہ حملے سے متعلق مواد کا حامل پایا۔اسے 8 ماہ کی سزا سنائی گئی ہے، جس میں سے پانچ ماہ وہ پہلے ہی گزار چکا ہے۔ اس کے بعد بھی اسے کچھ عرصے تک نگرانی میں رکھا جائے گا اور کسی بھی خلاف ورزی کی صورت میں اسے 16 ماہ مزید قید کاٹنا ہو گی۔ اپنے ریمارکس میں جج نے نوجوان ملزم سے کہا، ’یاد رکھنا کہ علاقائی پولیس تمہاری نگرانی کر رہی ہو گی۔‘واضح رہے کہ آسٹریا کی حکومت نے شدت پسندوں کے شام اور عراق کی جانب سفر کو روکنے کے لیے متعدد اقدامات کیے ہیں، جن میں سے ایک یہ بھی ہے کہ نوجوان اپنے والدین سے اجازت کے بغیر یورپی یونین سے باہر سفر نہیں کر سکتے۔حکومت نے پریشان والدین کے لیے ایک ہاٹ لائن کا قیام بھی کیا ہے، جب کہ مسلم تنظیموں، اسکولوں اور جیلوں سے بھی کہا گیا ہے کہ وہ شدت پسندی پر نگاہ رکھیں۔

مزید : عالمی منظر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...