پولیس اور وکلاء کے مابین تصادم انتہائی افسوسناک ہے،ڈاکٹر وسیم اختر

پولیس اور وکلاء کے مابین تصادم انتہائی افسوسناک ہے،ڈاکٹر وسیم اختر

لاہور(نمائندہ خصوصی)پارلیمانی لیڈرصوبائی اسمبلی وامیر جماعت اسلامی پنجاب ڈاکٹر سید وسیم اخترنے سانحہ ڈسکہ کے حوالے سے ’’سوال‘‘ پنجاب اسمبلی کے سیکرٹریٹ میں جمع کروادیا ہے جمع کرائے جانے والے سوال میں وزیر داخلہ سے استفسار کیاگیا ہے کہ ’’کیا وزیرداخلہ فرمائیں گے کہ ڈسکہ ضلع سیالکوٹ میں صدر تحصیل بار سمیت 2 وکلاء کو بے رحمانہ طور پر فائرنگ کرکے قتل کرنے والے ایس ایچ او شہزاد وڑائچ کے خلاف ماضی میں کتنے مقدمات درج ہیں اور ان پر محکمانہ طور اورعدالتی طورپرکیاکارروائی ہوئی اس کی تفصیل ایوان کوفراہم کی جائے نیز پنجاب میں کتنے ایس ایچ اوز ہیں جن کے خلاف مقدمات درج ہیں ہرایک کے نام کے ساتھ مقدمات کی تفصیل بھی معزز ایوان کوفراہم کی جائے ‘‘۔   علاوہ ازیں میڈیاکوجاری کردہ بیان میں ڈاکٹر سید وسیم اختر نے مزیدکہاکہ پولیس اور وکلاء قانون پر عملدرآمداور عدل وانصاف کی فراہمی کے حوالے سے اہم ادارے ہیں ان کے درمیان تصادم انتہائی افسوسناک اور قابل مذمت ہے کوئی بھی پولیس افسر اپنے اختیارات سے تجاوز کرتاہے تو اس سے بھی قانون کے مطابق نبٹناضروری ہے یوں محسوس ہوتاہے کہ جیسے پوراصوبہ لاقانونیت اور بدامنی کی بھینٹ چڑھ چکا ہے پولیس گردی سے کوئی بھی محفوظ نہیں۔سانحہ ڈسکہ کے واقعات میں ملوث پولیس اہلکاروں کے ساتھ قانون کے مطابق سخت تادیبی کارروائی کی جائے تاکہ آئندہ ایسا نا خو شگو ار واقعہ رونمانہ ہوسکے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1