ادارہ خود احتسابی کرے ورنہ معاملہ ایف آئی اے کو بھیج دیں گے

ادارہ خود احتسابی کرے ورنہ معاملہ ایف آئی اے کو بھیج دیں گے

 اسلام آباد(آئی این پی) سپریم کورٹ نے نیب کی کارکردگی پر عدم اطمینان کا اظہارکرتے ہوئے عدالتی حکم پرعملدرآمد نہ کرنے والے افسروں کے خلاف کارروائی کرکے دو روز میں رپورٹ جمع کرانے کا حکم دیتے ہوئے سماعت 3 جون تک ملتوی کر دی ‘جسٹس جواد ایس خواجہ نے ریمارکس دئیے ہیں کہ نیب کے افسران عوام کے دیئے گئے ٹیکس سے تنخواہ لیتے ہیں،ادارہ خود احتسابی کرے ورنہ معاملہ ایف آئی اے کو بھیج دیں گے، جسٹس جواد ایس خواجہ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے دورکنی بینچ نے نیب کی کارکردگی سے متعلق کیس کی سماعت کی، وکلاء کے دلائل پرجسٹس جواد نے ریمارکس دیئے عدالت کو بتایا جائے اگرنیب مستثنٰی ادارہ ہے تو نیب کے مقدمات بند کردیتے ہیں،نیب افسران عوام کے دیئے گئے ٹیکس سے تنخواہ لیتے ہیں،ہم آنکھیں بند نہیں کرسکتے،جسٹس جواد کا کہنا تھا کہ ٹیکس ادا کرنے والے شہری کے ساتھ زیادتی ہوتی ہے،ازالہ کرینگے،نیب خود احتسابی کرے ورنہ معاملہ ایف آئی اے کو بھیج دیں گے،عدالت نے عدالتی حکم پرعملدرآمد نہ کرنے والے افسروں کے خلاف کارروائی کرکے دو روز میں رپورٹ جمع کرانے کا حکم بھی دیا۔سماعت تین جون تک ملتوی کردی گئی۔

مزید : صفحہ آخر