تجارتی خسارہ میں 12.8فیصد کمی، اشیائے خوراک کی در آمدات 10فیصد گر گئیں 

تجارتی خسارہ میں 12.8فیصد کمی، اشیائے خوراک کی در آمدات 10فیصد گر گئیں 

  



اسلام آباد(اے پی پی‘ آن لائن)رواں مالی سال 2018-19ء کے ابتدائی دس ماہ میں جولائی تا اپریل کے دوران پاکستان کے تجارتی خسارے میں 12.8 فیصد کی کمی واقع ہوئی ہے جبکہ اپریل 2019ء میں تجارتی خسارہ میں 9.9 فیصد کی کمی ہوئی ہے۔ ادارہ برائے شماریات پاکستان (پی بی ایس) کی رپورٹ کے مطابق درآمدات میں 7.9 فیصد کی کمی کے نتیجہ میں تجارتی خسارہ کو کم کرنے میں مدد ملی ہے۔ پی بی ایس کے مطابق ریفائنڈ پٹرولیم مصنوعات‘ مشینری اور ٹرانسپورٹ گروپ کی ملکی درآمدات میں بالترتیب 14.4‘ 12 اور 34.9فیصد کی نمایاں کمی ریکارڈ کی گئی ہے جبکہ رواں مالی سال کے دوران موڈ گورپ اور تیار ملبوسات وغیرہ کی برآمدات میں اضافہ سے تجارتی خسارہ کو کم کرنے میں مدد ملی ہے جس سے قیمتی زرمبادلہ کی بچت کے ساتھ ساتھ زرمبادلہ کے ذخائر پر ادائیگیوں کے دباؤ کو بھی کم کرنے میں مدد حاصل ہوئی ہے۔دریں ا ثناء رواں مالی سال کے ابتدائی 10 ماہ میں اشیائے خوراک کی درآمدات میں 9.85 فیصد کی کمی ریکارڈ کی گئی ہے۔پاکستان بیوروبرائے شماریات کے اعدادوشمارکے مطابق رواں مالی سال کے دوران جولائی سے لیکراپریل 2019 تک اشیائے خوراک کی درآمدات پر4.7 ارب ڈالر کازرمبادلہ صرف کیاگیا جو گزشتہ مالی سال کے اسی عرصہ کے مقابلہ میں 9.85 فیصد کم ہے۔گزشتہ مالی سال کے اسی عرصہ میں شیائے خوراک کی درآمدات پر پاکستان نے 5.216 ارب ڈالر کازرمبادلہ صرف کیا تھا۔ اعدادوشمارکے مطابق اس عرصہ می پام آئل اوردالوں کی درآمدات میں بالترتیب 10.99 اور2.3 فیصد کی کمی ریکارڈ کی گئی ہے۔ اعدادوشمارکے مطابق اس عرصہ میں دودہ، کریم اوردودھ سے بنی اشیا کی درآمدات میں 10 فیصد کمی ریکارڈ کی گئی۔ اسی طرح مصالحہ جات کی درآمدات میں کمی کا تناسب 5.5 فیصد اورسویابین آئل کی درآمدات میں 34.3 فیصد کمی ریکارڈ کی گئی۔

مزید : کامرس


loading...