پارٹی منشور میں شامل سماجی تحفظ کے پروگراموں کو شروع کیا جائے: وزیر اعلی سندھ 

پارٹی منشور میں شامل سماجی تحفظ کے پروگراموں کو شروع کیا جائے: وزیر اعلی ...

  



کراچی(اسٹاف رپورٹر)وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ نے پاکستان پیپلز پارٹی کے انتخابی منشور پر عملدرآمدکے حوالے سے ایک اجلاس کی صدارت کی تاکہ آئندہ بجٹ میں سماجی تحفظ کے سلسلے میں حکمت عملی کو حتمی شکل دینے جس کے تحت غربت میں کمی کے پروگراموں  کے حوالے منصوبہ بندی کی جاسکے۔ اجلاس میں وزیراعلی سندھ کے مشیر برائے اطلاعات مرتضی وہاب، وزیراعلی سندھ کے کوآرڈی نیٹر حارث گذدر،چیئرپرسن پی اینڈ ڈی ناہید شاہ، وزیراعلی سندھ کے پرنسپل سیکرٹری ساجد جمال ابڑو،سیکرٹری خزانہ نجم شاہ و دیگر متعلقہ افسران نے شرکت کی۔ وزیراعلی سندھ نے کہا کہ پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے ہدایت کی ہے کہ  2018 میں ہونے والے انتخابات میں اعلان کئے گئے سماجی تحفظ  کے پروگراموں کو شروع کیا جائے۔ ان پروگراموں میں غربت میں کمی اور  آبادی کے پسماندہ طبقے غریب سے غریب تر اور خواتین کو سماجی سیکیورٹی فراہم کی جائے گی۔ پروگرام کے تحت  متعدد شعبے مثلا غربت میں کمی، خاندانی صحت  ماں اور بچے کے سپورٹ پروگرام، بے نظیر ہاری کارڈ، بے نظیر وومین ایگریکلچرل ورکرز پروگرام، انٹرشپ گارنٹی پروگرام شامل ہیں۔ وزیراعلی سندھ نے کہا ہے کہ غربت میں کمی کے پروگرام پہلے ہی مختلف محکموں کے ذریعے جاری ہیں اب ان پروگراموں کو ایک محکمہ کے تحت کیا جائے گا تاکہ مناسب توجہ مرکوز کی جاسکے۔ انھوں نے چیئرپرسن پی اینڈ ڈی ناہید شاہ کو ہدایت کی کہ وہ اپنے محکمہ میں ایک علحدہ یونٹ قائم کریں۔  غربت میں کمی کے حوالے سے مختلف تجاویز تھیں مثلا نوجوانوں اور خواتین کو  اپنے چھوٹے کاروبار کرنے کے لیے ایڈوانس چھوٹے قرضے دیئے جائیں اور انھیں آسان اقساط میں واپس لیا جائے۔  اس پروگرام کے تحت خواتین  بااختیار ہونگی اور انھیں دیہی علاقوں میں زرعی شعبے میں  کھاد اور بیج فراہم کرکے  زراعت کے شعبے میں مصروف عمل کیا جاسکے گا۔  نوجوان کو انکی اعلی تعلیم جاری رکھنے کے لیے اسکالرشپ بھی دی جائیں گی۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ ان پروگراموں کو شروع کرنے کے لیے تجاویز کو حتمی شکل دی جائے اور انکی مناسب  فورمز سے منظوری لی جائے گی۔ایک علیحدہ اجلاس میں محکمہ صحت کے ترقیاتی اسکیموں کا  جائزہ لیا، اجلاس میں صوبائی وزیر صحت ڈاکٹر عذرا پیچوہو، چیئرپرسن پی اینڈ ڈی ناہید شاہ، وزیراعلی سندھ کے پرنسپل سیکریٹری ساجد جمال ابڑو، سیکریٹری خزانہ، اسپشل سیکریٹری صحت و دیگر نے شرکت کی۔  وزیراعلی سندھ کو بتایا گیا کہ 13.5 بلین روپے کی 10 اسکیمیں جاری ہیں جنکے لیے 7.671 بلین روپے جاری کئے جاچکے ہیں  جس میں سے 5 بلین روپے استعمال ہوچکے ہیں جبکہ باقی مانندہ فنڈز بھی مالی سال کے آخر تک استعمال ہوجائیں گے۔  وزیراعلی سندھ نے کہا کہ  وہ 1.6 بلین روپے کے  ڈی ایچ کیو  اسپتال مٹھی، 763.227 ملین روپے کے ٹی ایچ کیو کشمور اور  دیگر مختلف اسکیموں کی اپگریڈیشن کے کام کو مکمل کرنے اور ڈی ایچ کیوز میں توسیع  کے خواہاں ہیں ۔ اجلاس میں  سرکاری اسپتالوں میں تمام لیب کی سہولیات کی آؤٹ سورسنگ پر بھی غور کیا گیا تاکہ انھیں 24 گھنٹے جاری رکھا جاسکے۔ 

مزید : صفحہ اول