ہائیکورٹ کا سردار گورچانی کے زیر استعمال سرکاری اراضی کیخلاف حکم امتناعی

ہائیکورٹ کا سردار گورچانی کے زیر استعمال سرکاری اراضی کیخلاف حکم امتناعی

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے محکمہ جنگلات کی 10ہزار ایکڑ اراضی پر ڈپٹی سپیکر پنجاب اسمبلی سردار شیر علی گورچانی کے مبینہ قبضے کے خلاف دائر درخواست پر محکمہ مال سے جواب طلب کرتے ہوئے ڈپٹی سپیکر کو سرکاری اراضی کا کسی بھی قسم کا استعمال کرنے سے روک دیا ۔جسٹس سید منصور علی شاہ نے یہ عبوری حکم تحریک انصاف کے ایم پی اے سردار علی رضا کی درخواست پر جاری کیا۔گزشتہ روز درخواست گزار کے وکیل سعد رسول نے موقف اختیار کیا کہ ڈپٹی سپیکر پنجاب اسمبلی سردار شیر علی گورچانی نے محکمہ جنگلات کے افسروں کی ملی بھگت سے راجن پور میں محکمہ کی 10ہزار ایکڑ سے زائد اراضی پر قبضہ کر لیا ہے، انہوں نے مزید موقف اختیار کیا کہ ڈپٹی سپیکر اور ان کے خاندان کے افراد نے محکمہ جنگلات کے درختوں کو کاٹ کر وہاں کاشتکاری شروع کر رکھی ہے ، انہوں نے استدعا کہ محکمہ مال کو ڈپٹی سپیکر سے سرکاری اراضی فوری واگزار کرانے کا حکم دیا جائے اور درخواست کے حتمی فیصلے تک شیر علی گورچانی کو راجن پور جنگل کی اراضی استعمال کرنے سے روکا جائے، ابتدائی سماعت کے بعد عدالت نے محکمہ مال سے دوہفتوں میں جواب طلب کرتے ہوئے ڈپٹی سپیکر کو سرکاری اراضی کا کسی بھی قسم کا استعمال کرنے سے روک دیا ۔

حکم امتناعی

مزید :

صفحہ آخر -