دھاندلی اور ٹرپل ون بریگیڈ سے آنے والوں میں کوئی فرق نہیں، دھرنے کا مقصد احتساب اور سزائیں ہیں: عمران خان

دھاندلی اور ٹرپل ون بریگیڈ سے آنے والوں میں کوئی فرق نہیں، دھرنے کا مقصد ...
دھاندلی اور ٹرپل ون بریگیڈ سے آنے والوں میں کوئی فرق نہیں، دھرنے کا مقصد احتساب اور سزائیں ہیں: عمران خان
کیپشن: Imran Khan

  

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ الیکشن کمیشن، سابق چیف جسٹس اور نگران حکومت دھاندلی میں ملوث ہیں، دھاندلی اور ٹرپل ون بریگیڈ کے ذریعے آنے والوں میں کوئی فرق نہیں۔

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ عام انتخابات کیلئے صرف تین پرنٹنگ پریس سے 55 لاکھ بیلٹ پیپرز ایکسٹرا چھاپے گئے اور انہی کے ذریعے دھاندلی کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ لاہور میں خواجہ سعد رفیق کے حلقے میں ایک لاکھ 24 ہزار ایکسٹرا بیلٹ پیپرز پرنٹ ہوئے، دھاندلی کرنے والوں کو سزائیں نہ دیں تو الگا الیکشن بھی ایسا ہی ہو گا۔عمران خان نے کہا کہ نواز شریف کی تقریر کے بعد نتائج تبدیل ہوئے ، ان کی تقریر سے پہلے جہانگیر ترین 30,000 ووٹوں سے جیت رہے تھے، جو پہلے ہی کرپٹ ہے وہ اسمبلی میں جا کر اچھا کیسے ہو جائے گا؟صاف اور شفاف الیکشن کے بغیر جمہوریت نہیں آ سکتی۔

تحریک انصاف نے اضافی بیلٹ پیپرز کی چھپائی سے متعلق اعداد و شمار پیش کر دیئے

انہوں نے کہا کہ سندھ میں پیپلز پارٹی اور پنجاب میں مسلم لیگ ن نے دھاندلی کی اور اب نواز شریف اور آصف زرداری مل کر احتساب کو روک رہے ہیں کیونکہ اگر تحقیقات ہو گئیں تو سب کی اصلیت سامنے آ جائے گی۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ 2013ءکے انتخابات میں ہارنے اور جیتنے والے دونوں ہی دھاندلی کا کہہ رہے ہیں لیکن تحقیقات کی جانب کوئی نہیں آ رہا، تحریک انصاف واحد جماعت ہے جو انصاف مانگ رہی ہے اور ہمیں ایک سال ہو گیا انصاف کیلئے تمام دروازے کھٹکھٹائے۔ انہوں نے کہا کہ دھرنا تو ابھی شروع ہوا ہے، 30 نومبر کو نئی مہم کا اعلان کروں گا۔

الیکشن کمیشن نے عمران خان کے الزامات مسترد کر دیئے

انہوں نے کہا کہ الیکشن میں سیاسی جماعتوں نے اپنے اپنے امپائر کھڑے کئے اور سابق چیف جسٹس چوہدری افتخار نے میچ فکس کرانے میں بھرپور کردار ادا کیا، ڈیڑھ کروڑ ووٹ سے پتہ چلتا ہے کہ انتخابات میں بڑی دھاندلی ہوئی۔ ان کا کہنا تھا کہ پنجاب میں لوڈشیڈنگ کی وجہ سے معیشت نیچے چلی گئی ہے، پنجاب اور سندھ حکومت پولیس سٹیٹ بنی ہوئی ہیں، کراچی میں قاتلوں کو پکڑا نہیں جاتا اس لئے ٹارگٹ کلنگ ہو رہی ہے، خیبرپختونخواہ میں کسی سیاستدان کے خلاف مقدمہ درج نہیں ہوا۔

مزید :

قومی -Headlines -