توہین عدالت کیس :ہائی کورٹ نے لیسکو قصور کے اعلیٰ ترین افسر کو معطل کردیا

توہین عدالت کیس :ہائی کورٹ نے لیسکو قصور کے اعلیٰ ترین افسر کو معطل کردیا
توہین عدالت کیس :ہائی کورٹ نے لیسکو قصور کے اعلیٰ ترین افسر کو معطل کردیا

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائی کور ٹ کے مسٹر جسٹس فرخ عرفان خان نے توہین عدالت کے تحت شوکاز نوٹس جاری کرتے ہوئے لیسکو قصور کے مینجنگ آفیسر لطیف انجم کو معطل کردیا ہے ۔لطیف انجم نے بلدیاتی انتخابات کے ڈسٹرکٹ ریٹرننگ افسر کے طور پر عدالت عالیہ کے احکامات سے روگردانی کی جس پر متعلقہ شہری میاں محمد رمضان کی طرف سے ان کے خلاف توہین عدالت کی درخواست دائر کی گئی ۔اس کیس میں فاضل جج کے طلب کرنے پر لطیف انجم عدالت میں پیش ہوئے ،عدالت نے ان سے استفسار کیا کہ انہوں نے عدالتی حکم کی تعمیل کیوں نہیں کی ؟جس پر لطیف انجم نے بھری عدالت میں کہا کہ میں ایک سینئر افسر ہوں اور جلد ہی میری ترقی بھی ہونے والی ہے ،اس عدالتی کارروائی کی بنا پر ان کی ترقی میں رکاوٹ پیدا ہوسکتی ہے ،انہوں نے عدالت سے استدعا کی کہ اس کیس کو داخل دفتر کردیا جائے ۔فاضل جج نے انہیں باور کروایا کہ وہ اس وقت عدالت میں کھڑے ہیں ان کے یہ الفاظ بھی توہین عدالت کے زمرہ میں آتے ہیں ۔ڈپٹی اٹارنی جنرل مزمل اختر شبیر نے لطیف انجم کے رویہ کو نظر انداز کرنے کی استدعا کرتے ہوئے کہا کہ یہ افسر عدالت میں پیش ہونے کے آداب سے ناواقف ہے ۔فاضل جج نے قرار دیا کہ اس افسر کا رویہ اور عدالتی احکامات سے رو گردانی سے پتہ چلتا ہے کہ اس کی نظر میں عدالتی احکام کی کوئی عزت نہیں ہے اور یہ خود کو قانون سے بالاتر سمجھتا ہے ۔ان حالات میں عدالت کے پاس اس کے سوا کوئی چارہ کار نہیں کہ اس کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی عمل میں لائی جائے ۔فاضل جج نے ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل سراج اسلام کو اس کیس کا پراسیکیوٹر مقرر کرتے ہوئے لطیف انجم کو شوکاز نوٹس جاری کردیئے جبکہ عدالت عالیہ کے دفتر کو ہدایت کی گئی ہے کہ توہین عدالت کی اس کارروائی کے لئے الگ فائل کھولی جائے ۔فاضل جج نے حکم دیا کہ لطیف انجم جس عہدہ پر بھی خدمات انجام دے رہے ہیں وہ اس پر تاحکم ثانی معطل رہیں گے ،اس کیس کی مزید سماعت 2دسمبر کو ہوگی ۔

مزید : لاہور