اب پاکستان میں گاڑیاں اتنی سستی ملیں گی کہ پاکستانیوں نے کبھی سوچا بھی نہ تھا، چین نے اعلان کردیا

اب پاکستان میں گاڑیاں اتنی سستی ملیں گی کہ پاکستانیوں نے کبھی سوچا بھی نہ ...
اب پاکستان میں گاڑیاں اتنی سستی ملیں گی کہ پاکستانیوں نے کبھی سوچا بھی نہ تھا، چین نے اعلان کردیا

  

لاہور (این این آئی)پاکستانی کمپنیوں نے چینی کمپنیوں کے تعاون سے آٹو سیکٹر میں بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری کا فیصلہ کر لیا ہے جس سے اسے اس شعبے میں موجود اجارہ داری ختم ہونے اور گاڑیوں کی قیمتوں میں کمی، معیار میں بہتری اور مسابقت کو ترقی ملنے کی توقع ہے۔

نئی پانچ سالہ آٹو پالیسی برائے سال 2016-21ء  میں نئے سرمایہ کاروں کیلئے مراعات کے اعلان کے بعد ریگل آٹو موبائلز انڈس لمیٹڈ، یونائیٹڈ آٹو انڈسٹریز، پرائیوٹ لمیٹڈ اور حبیب رفیق پرائیوٹ لمیٹڈ نے چینی کمپنیوں کے تعاون سے پاکستان میں آٹو کے شعبے میں سرمایہ کاری کا فیصلہ کیا ہے۔ اس کے تحت نئی گاڑیوں اور موٹر سائیکلز کیلئے پاکستان میں نئے پلانٹ لگائے جائیں گے۔ جس کے تحت تیار ہونے والی گاڑیاں کم قیمت اور معیاری ہوں گے۔ حکومتی ذرائع کا کہنا ہے کہ ریگل آٹو موبائلز انڈس لمیٹڈ نے چینی کمپنی ڈی ایف ایس کے موٹرز اور یونائیٹڈ آٹو انڈسٹریز نے چینی کمپنی لوینگ کے تعاون سے آٹو شعبے میں سرمایہ کا فیصلہ کیا ہے۔

ایک ایسا ملک پاکستان میں پیسے لگانے جارہا ہے کہ سنتے ہی وہ پاکستانی جو اپنا پیسہ باہر بھیج چکے ہیں تمام پیسہ واپس لے آئیں گے

اس طرح حبیب رفیق پرائیوٹ لمیٹڈ نے ژین ڈونگ اور زوٹے انٹرنینشل کے تعاون سے گاڑیاں جبکہ چینی کمپنی گوانگ ژوڈے ین کے تعاون سے موٹر سائیکلز تیار کرنے کیلئے سرمایہ کاری کا فیصلہ کیا ہے۔ چینی کمپنیوں کے تعاون سے آٹو شعبے سرمایہ کاری کیلئے مقامی کمپنیوں نے وزرات صنعت و پیداوار کے ماتحت ادارے انجینئرنگ اینڈ ڈویلپمنٹ بورڈ میں درخواستیں جمع کرا دی ہیں۔ واضح رہے کہ اس سے پہلے اطلاعات موصول ہوئی تھیں کہ نیشنل لاجسٹک سیل نے جرمن کمپنی ”مان“ کے ساتھ ملک کر پاکستان میں مال برادر گاڑیاں تیار کرنے کیلئے سرمایہ کاری کا فیصلہ کیا ہے جس کے تحت پاکستان میں ٹرک، ڈمپر اور ٹریلر تیار کرنے کیلئے پلانٹ لگایا گیا جائے گا۔

حکومتی ذرائع کا کہنا ہے کہ پہلے مرحلے میں پاک فوج کی ضروریات پوری کرنے کیلئے سالانہ 700 سے 1000 مال برادر گاڑیاں تیار کی جائیں گے بعد ازاں کمرشل مقاصد کیلئے برادر گاڑیاں تیار کرنے کا عمل شروع کیا جائے گا۔ مال برادر گاڑیاں تیار کرنے کیلئے اگلے 2 سے 3 برس میں پلانٹ لگانے کا عمل مکمل کرنے کا منصوبہ بنایا گیا ہے۔

مزید : بزنس