آرمی چیف کے پاس اس ’ چھڑی‘ کا کیا مقصد ہوتا ہے، یہ کب کب ہاتھ میں رکھتے ہیں اور کس چیز سے بنتی ہے؟ جانئے انتہائی دلچسپ معلومات

آرمی چیف کے پاس اس ’ چھڑی‘ کا کیا مقصد ہوتا ہے، یہ کب کب ہاتھ میں رکھتے ہیں ...
آرمی چیف کے پاس اس ’ چھڑی‘ کا کیا مقصد ہوتا ہے، یہ کب کب ہاتھ میں رکھتے ہیں اور کس چیز سے بنتی ہے؟ جانئے انتہائی دلچسپ معلومات

  

اسلام آباد (ویب ڈیسک) فوجی افسران کے ہاتھ میں موجوداس چھڑی کو فوجی زبان میں کمانڈ کین یا ملاکہ کین کہا جاتاہے جو شمالی علاقہ جات میں پائی جانیوالی انتہائی نایاب لکڑی ’ملاکہ‘ سے بنتی ہے، اسی نسبت سے اس چھڑی کو ملاکہ کین بھی کہاجاتاہے ۔

یہ کین صرف آرمی چیف نہیں رکھتا بلکہ فوج کی تمام پوسٹوں پر تعینات افسروں یعنی کور کمانڈرز اور جی او سی وغیرہ کے یونیفارم کا لازمی حصہ تصور کی جاتی ہے۔ قومی پرچم کو سلامی دیتے وقت، گارڈ آف آنر لیتے وقت، پریڈ کا معائنہ کرتے وقت افسران کے پاس کمانڈ کین ہونا ضروری ہوتی ہے، چیف آف آرمی سٹاف کی صدر مملکت، وزیر اعظم یا اہم سیاسی شخصیات سے ملاقات کے وقت کمانڈ کین اور ٹوپی باہر رکھی جاتی ہے جبکہ آرمی چیف اپنے دفتر میں ملاقات کریں تو کمانڈ کین دفتر کے اندر ہی ایک طرف رکھ دی جاتی ہے،یہ چھڑی مختلف مواقعوں پر ساتھ رکھنے کا مخصوص انداز ہوتا ہے۔

مزید : اسلام آباد