عمران خان جب کہیں گے، اسمبلیاں توڑ دینگے، پرویز الٰہی، بیرسٹر سیف، پنجاب میں حمزہ شہباز نے آج اپوزیشن جماعتوں کا اجلاس بلا لیا وزیراعلٰی کیخلاف تحریک عدم اعتماد، یا اعتما د کے ووٹ کافیصلہ کیا جائیگا

عمران خان جب کہیں گے، اسمبلیاں توڑ دینگے، پرویز الٰہی، بیرسٹر سیف، پنجاب میں ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لاہور (نمائندہ خصوصی، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) وزیراعلیٰ پنجاب  چودھری پرویز الٰہی نے سابق وزیراعظم عمران خان کے اسمبلیوں سے مستعفی ہونے کے معاملے پر ردعمل کا اظہار کیا ہے۔اپنے ویڈیو بیان میں پرویز الٰہی کا کہنا تھاکہ پنجاب حکومت عمران خان کی امانت ہے، ہم وضع دار  لوگ ہیں جس کے ساتھ چلتے ہیں، اس کا ساتھ نہیں چھوڑتے۔انہوں نے کہا کہ عمران خان اسمبلیاں توڑنے کا کہیں گے تو ایک منٹ کی دیرنہیں ہوگی، استعفے دیے تو شہبازشریف کی 27 کلومیٹر کی حکومت 27 گھنٹے بھی نہیں چل سکے گی۔ان کا کہنا تھاکہ اللہ نے عمران خان کو نئی زندگی عطا کی ہے، راولپنڈی جلسے میں عمران خان کی سیاسی حکمت عملی فیصلہ کن راؤنڈ میں داخل ہوگئی، صوبائی اسمبلیوں سے استعفے آتے ہی پی ڈی ایم کا جعلی اتحاد بھی انتشارکا شکارہوجائے گا۔وزیراعلیٰ کا کہنا تھاکہ ن لیگ والے شعبدہ باز جھوٹ بولنے سے باز ہی نہیں آرہے، آپ کے ساتھ الیکشن میں وہ ہوگا آپ کی پشتیں بھی یادرکھیں گی، اس ملک میں دین کی حکمرانی ہوگی، ایسے کام ہوں گے جس سے عام اورغریب آدمی اوران کے بچوں کوفائدہ ہو، اس کی ابتدا پنجاب سے ہوچکی ہے، روزایک نئی چیز نظر آئے گی جس کافائدہ غریب آدمی کوہوگا۔وزیراعلیٰ پنجاب چودھری پرویز الٰہی سے سینئر فلم پروڈیوسر شیخ امجد رشید اور رانا خالدمنظور نے وزیر اعلی آفس میں ملاقات کی،جس میں فلم انڈسٹری کی بحالی و مسائل کے حل کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا گیا۔وزیراعلیٰ چودھری پرویزالٰہی نے اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پاکستانی فلم بالخصوص پنجابی فلم کی بحالی کیلئے ترجیحی بنیادوں پر اقدامات کئے جائیں گے۔فنکاروں کی فلاح وبہبود کیلئے 1ارب روپے کے فنڈز سے انڈومنٹ فنڈ قائم کیا جا رہا ہے۔مستحق فنکاروں کے لئے مالی امداد 5 ہزار سے بڑھا کر 25 ہزار روپے کر دی ہے۔پنجاب حکومت فلم پروڈکشن سٹوڈیو بنانے کا جائزہ لے گی اور عوام کو معیاری تفریح کی فراہمی کے لئے ہر ممکن اقدامات کئے جائیں گے۔فلم پروڈکشن میں اضافے سے روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے۔پنجاب فن و ثقافت کے لحاظ سے زرخیز دھرتی ہے۔ شیخ امجد رشید نے فنکاروں کے لئے انڈومنٹ فنڈ کے اعلان پر وزیراعلیٰ چودھری پرویزالٰہی کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ وزیراعلیٰ چودھری پرویز الٰہی کا اعلان خوش آئند ہیزیراعلیٰ پنجاب چودھری پرویز الٰہی سے چیئرمین ٹاسک فورس برائے فاریسٹ،وائلڈ لائف اینڈ فشریز بدر منیرنے وزیر اعلی آفس میں ملاقات  کی۔ جس میں صوبے میں جنگلی حیات اور ماہی پروری کے فروغ کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا گیا۔ وزیر اعلی چودھری پرویزالٰہی نے کہا کہ پنجاب میں فش فارمنگ کے لیے ہر ممکن سہولت دی جائے گی۔وزیراعلیٰ چودھری پرویزالٰہی نے ٹراوٹ مچھلی کی پنجاب میں فارمنگ کے لئے جامع پلان طلب کرلیا۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ جھینگوں کی افزائش کیلئے پائلٹ پراجیکٹ تیار کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ وائلڈ لائف اور فشریز سے متعلقہ شکار کے لائسنس کو آن لائن کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ شکار کے لائسنس کے اجراء کو گو پنجاب ایپ میں شامل کیاجائے گا۔ شکار کالائسنس رکھنے والے افراد کو ہر ممکن سہولتیں فراہم کریں گے۔ محکمہ فاریسٹ،وائلڈ لائف اینڈ فشریز کے چھوٹے سٹاف کے ایشوز فی الفور حل کئے جائیں گیمعاون خصوصی اطلاعات بیرسٹر محمد علی سیف نے کہا ہے کہ اسمبلی استعفوں سے متعلق عمران خان کے حکم پر فوری عمل ہوگا اور خیبرپختونخوا حکومت عمران خان کے ہر حکم پر من و عن عمل درآمد کریگی۔اپنے بیان میں بیرسٹر سیف کا کہنا تھا کہ استعفے، اسمبلی تحلیل اور حکومت سے نکلنے کے لیے تیار ہیں کیونکہ سیاسی بحران کے خاتمے کا واحد حل نئے اور شفاف انتخابات ہیں۔انہوں نے کہا کہ امپورٹڈ حکومت ملک و قوم کیساتھ مخلص ہے تو الیکشن کا اعلان کرے، ملک کو سیاسی بحران سے نکالنے کے لیے بال اب امپورٹڈ حکومت کے کورٹ میں ہے۔معاون خصوصی کا کہنا تھا کہ راولپنڈی میں تاریخی پاور شو نے تمام ریکارڈ توڑ دیے اور کنٹینرستان عوام کے جوش و جذبے کے سامنے ریت کی دیوار ثابت ہوا، رانا ثناء اللہ کا دور دور تک آتا پتا نہیں تھا۔دوسری طرف سپیکر خیبرپختونخوا اسمبلی مشتاق غنی نے کہا ہے کہ ہم اسمبلی سے نکلنے کو تیار ہیں،صرف عمران خان کے حکم کا انتظار ہے۔ اسپیکر کے پی اسمبلی مشتاق غنی نے اپنے بیان میں کہا کہ ہم اسمبلی سے نکلنے کو تیار ہیں صرف عمران خان کے حکم کا انتظار ہے۔ انہوں نے کہاکہ جیسے ہی حکم ملا ایک لمحے کی تاخیر نہیں کریں گے۔انہوں نے کہاکہ رانا ثنا ء اللہ کے میڈیا بیانات کسی بوسیدہ ٹی وی سیریل کے اسکرپٹ جیسے ہوتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ خیبرپختونخوا اسمبلی میں پی ٹی آئی کو نکال دیں تو پیچھے خالی کرسیاں ہی ہیں۔
پرویز الٰہی

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)پاکستان تحریک انصاف کے گزشتہ روز راولپنڈی میں ہونے والے جلسے کے حوالے سے چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے کہا ہے کہ ہماری تحریک قانون کی حکمرانی اور حقیقی آزادی تک جاری رہے گی۔تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز پی ٹی آئی کی جانب سے راولپنڈی میں جلسہ کیا گیا جس میں چیئرمین تحریک انصاف عمران خان سمیت دیگر پارٹی قیادت نے خطاب کیا۔پاکستان تحریک انصاف نے راولپنڈی میں ہونے والے جلسے کو کامیاب جلسہ قرار دیا جبکہ حکمران جماعت میں شامل اتحادیوں نے پی ٹی آئی کے جلسے کو ایک فلاپ جلسہ قرار دیا گیا اور کہا گیا کہ عمران خان نے ہزیمت سے بچنے کیلئے اسمبلیاں توڑنے والا بیان دیا تاہم وہ ایسا کریں گے نہیں اب اس حوالے سے چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے سوشل میڈیا پر بیان جاری کیا ہے جس میں انہوں نے گزشتہ روز آزادی مارچ میں شرکت پر تمام لوگوں کا شکریہ ادا کیا ہے۔عمران خان نے اپنی ٹوئٹ میں لکھا کہ گزشتہ روز راولپنڈی آزادی مارچ میں پاکستان بھر سے بڑی تعداد میں لوگ آئے، ہماری تحریک قانون کی حکمرانی اور حقیقی آزادی تک جاری رہے گی۔تحریک انصاف کے آئینی ماہرین نے اسمبلیوں سے باہر آنے کے طریقہ کار سے متعلق رپورٹ چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کو پیش کردی۔ رپورٹ کے مطابق پنجاب اور خیبر پختونخوا کے وزرائے اعلی آئین کے آرٹیکل 112 کے تحت گورنر کو صوبائی اسمبلی تحلیل کرنے کی ایڈوائس بھجوا سکیں گے اگرگورنر ایڈوائس پر عمل نہ کرے تو 48گھنٹوں کے اندر متعلقہ صوبائی اسمبلی خودبخود تحلیل تصور ہوگی، رپورٹ کے مطابق وزیر اعلی پنجاب یا وزیر اعلی خیبر پختونخوا کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک آنے کے بعد سات دن تک وزیراعلیٰ گورنر کو اسمبلی تحلیل کرنے کی ایڈوائس نہیں بھجوا سکے گا کیونکہ دونوں صوبوں میں اپوزیشن کو آئین کے آرٹیکل 136(1) کے تحت وزیر اعلی کے خلاف عدم اعتماد کی قرارداد پیش کرنے کا حق حاصل ہے اورعدم اعتماد کی تحریک پر سات دن کے اندر ووٹنگ ہوگی،رپورٹ کے مطابق کسی بھی صوبائی اسمبلی کی تحلیل کے بعد نگران وزیراعلی کی تقرری پرمشاورت ہوگی اور تحلیل شدہ اسمبلی میں وزیر اعلی اور قائد حزب اختلاف آئین کے آرٹیکل 224 (اے)2 کے تحت نگران وزیر اعلی کے لئے مشاورت کریں گے، رپورٹ کے مطابق مشاورتی عمل میں تین دن تک کسی نتیجے پر نہ پہنچنے کی صورت میں سپیکر صوبائی اسمبلی چھ رکنی کمیٹی قائم کرے گا،اس کمیٹی میں حکومت اور اپوزیشن کو مساوی نمائندگی دی جائے گی اسپیکر کی قائم کردہ کمیٹی بھی اگر تین دن میں نگران وزیر اعلی کا فیصلہ نہ کر سکی تو معاملہ الیکشن کمیشن آف پاکستان کو بھجوایا جائے گا اورنگران صوبائی وزیر اعلی کا فیصلہ الیکشن کمیشن آف پاکستان کی صوابدید پر ہوگا
عمران خان

 لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف و مسلم لیگ (ن) کے مرکزی نائب صدر حمزہ شہباز نے آج پارٹی کے ارکان اسمبلی کا اجلاس طلب کرلیا۔جلاس میں وزیر ا علیٰ پنجاب کیخلاف تحریک عدم اعتماد لانے پر غور ہوگا اور وزیراعلیٰ کو گورنر کی جانب سے اعتماد کا ووٹ لینے کا کہنے سے متعلق بھی مشاورت ہوگی۔ذرائع نے بتایا اجلاس میں سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا جائیگا۔ ذرائع کے مطابق عمران خان کے اسمبلیوں سے مستعفی ہونے کے اعلان کے بعد مسلم لیگ ن نے بھی اپنی حکمت عملی بنانا شروع کر دی۔ جس کے مطابق مسلم لیگ (ن) وزیر اعلیٰ پنجاب پرویز الٰہی کو اعتماد کا ووٹ لینے کا کہے گی۔مسلم لیگ (ن) کے ذرائع کے مطابق عمران خان کا اسمبلیوں سے مستعفی ہونے کے اعلان کے بعد مسلم لیگ ن کی سینئر قیادت کے درمیان اہم مشاورت ہوئی۔ سینئر قیادت نے قائدین کو پنجاب میں تحریک عدم اعتماد جمع نہ کروانے۔ گورنر پنجاب کی طرف سے وزیراعلیٰ پنجاب کو اعتماد کا ووٹ لینے کی تجویز دی گئی ہے۔مسلم لیگ ن کے سینئر رہنما کا خیال ہے کہ وزیراعلیٰ پنجاب کو اعتماد کا ووٹ لینے کیلئے نمبر پورے کرنا ہوں گے۔ جو مشکل کام ہوگا۔ اگر نمبر پورے نہیں کرتے تو پھر دوبارہ الیکشن ہوگا اور اس دوران پی ڈی ایم کو پنجاب میں نمبر پورے کرنے کیلئے وقت مل جائے گا۔ذمسلم لیگ ن کے مرکزی نائب صدر وفاقی وزیر میاں جاوید لطیف نے دعویٰ کیا ہے کہ پنجاب اور کے پی کے میں تحریک عدم اعتماد کیلئے ہمارے پاس مطلوبہ تعداد پوری ہے یہی وجہ ہے کہ عمران خان نے ممکنہ تحریک اعتماد سے قبل ہی اسمبلیوں سے الگ ہونے کا اعلان کردیا ہے جو انکی شکست کا واضح ثبوت ہے سات ماہ کے اندر ملک کے اندر جو ہیجانی اور بے یقینی کی صورت حال پیدا کرکے ملک کو ناقابل تلافی نقصان پہنچایا گیا اس کے ذمہ دار عمران خان ہیں پاکستان کی 75سالہ تاریخ میں عمران خان واحد سیاستدان ہیں جنہوں نے یوٹرن لینے کا عالمی ریکارڈ قائم کیا ہے حقیقی آزادی کے نام پر ملکی ریاستی اداروں کو کمزور اور تقسیم کرنے کی سازش کی جارہی ہے عمران خان پہلے نیشنل اور اب انٹرنیشنل اسٹیبلشمنٹ کا لاڈلا ہے اگرچہ اداروں نے اپنے اندر مثبت تبدیلیاں لا کر سیاسی مداخلت نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے مگر ابھی بھی عمران خان کے سہولت کار موجود ہیں اسلام آباد میں لاکھوں لوگوں کو لانے کے تمام دعوے جھوٹ کا پلندہ ثابت ہوئے ہیں دو صوبائی حکومتوں گلگت بلتستان اور آزاد کشمیر کی سرکاری سرپرستی کے باوجود راولپنڈی میں چند ہزار کا اجتماع عمران خان کے بیانیہ کی ناکامی کا ثبوت ہے  
ن لیگ اجلاس

مزید :

صفحہ اول -