اگرچہ راہ  میں بھی خار بے شمار  آۓ۔۔۔

اگرچہ راہ  میں بھی خار بے شمار  آۓ۔۔۔
اگرچہ راہ  میں بھی خار بے شمار  آۓ۔۔۔

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اگرچہ  راہ   میں  بھی خار  بے  شمار  آۓ
طلسمِ رب سے  خزانے مگر  ہزار آۓ

جناب  جام   لٹانے   سے   باز   آئیں  گر
خراب چہرے پہ بھی  آج کچھ نکھار آۓ

ابھی تو  مانگتا ہوں جانِ جاں  دعائیں بھی
کہ فصلِ  گل  پہ کبھی ایک سی  بہار آۓ

یوں  ساقیا ملیں بھر بھر کے جام  رندوں کو
کسی تو آنکھ میں  پی  پی کے ہی خمار  آۓ

مرے رقیب نے  چھیڑا  ہے سر نرالا  سا
طبیبِ شہر بھی  لے کر  کوئی  گٹار  آۓ

نہ ووٹ ووٹ بنیں کوڑے داں ذرا صاحب
ابھی  نہ  قوم  پہ  میری   وہی  حمار   آۓ

قریب  لوگ  رہے    چند   لمحے   امبر   جی
'وہ سجدہ  گاہ  محبت  میں  بے  قرار  آۓ"

کلام : ڈاکٹر شہباز امبر رانجھا

مزید :

شاعری -