پھر بھی مقتل میں مرا قد ہی نُمایاں نِکلا۔۔۔

پھر بھی مقتل میں مرا قد ہی نُمایاں نِکلا۔۔۔
پھر بھی مقتل میں مرا قد ہی نُمایاں نِکلا۔۔۔

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

کل جو دِیوار گراتا ہوا طوُفاں نِکلا  
پائے وحشت کے لئے گھر میں بَیاباں نِکلا 

جانے کِس غم سے منوّر ہے ہر اِک لَوحِ جَبِیں
درد ہی رشتۂ  اوراقِ پریشاں نِکلا

سر جھکایا تو کبھی پاؤں تراشے اپنے !
پھر بھی مقتل میں مرا قد ہی نُمایاں نِکلا

جال ہر سمت رِوایَت نے بِچھا رکھّے تھے 
بابِ اِنکار کھُلا، جادۂ اِمکاں نِکلا

ہم کہ محرُومیِ قِسمت کا گلہ رکھتے تھے
جس کو نزدِیک سے دیکھا وہ پریشاں نکلا

آج بستی میں ہر اِک شخص ہے آئینہ بدست
ہر کوئی خود سے مُلاقات پہ حیراں نِکلا

اب کسے چاک کریں، کِس کے اُڑائیں پرزے
ہر گریبان، مظفر کا گریباں نِکلا    

کلام :پروفیسر مظفر حنفی

مزید :

شاعری -