ان کی آنکھوں کےدریچوں سےقضا جھانکتی ہے۔۔۔

ان کی آنکھوں کےدریچوں سےقضا جھانکتی ہے۔۔۔
ان کی آنکھوں کےدریچوں سےقضا جھانکتی ہے۔۔۔

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

پچھلے  موسم  کی  وبا  اور  پرائے   ہوئے   لوگ 
یاد آئے ہیں بہت  آج  بھلائے ہوئےلوگ

ان کی آنکھوں کےدریچوں سےقضا جھانکتی ہے
وہ  شب  تار ، وہ ہجرت کے ستائےہوئےلوگ 

ان  گنت لاشوں کے انبار   پہ    ہیں استادہ 
شاخ  زیتون  کی  ہاتھوں  میں اٹھائے ہوئے لوگ

فقر  کی  سان  چڑھائی    ہوئی  شمشیر    لئے 
پھر  ابھرنے  کو  ہیں  دنیا  میں دبائے ہوئے لوگ

وہ  ترا   در  ،  وہ  چھلکتا  ہوا   پیمانہء   شوق
وہ  مئے  دید  سے   پھر وجد میں آئے ہوئے لوگ

مجھکو کاندھوں پہ اٹھاتے ہو  تو ڈر جاتا ہوں
خاک بن جاتے ہیں کاندھوں پہ اٹھائے ہوئے لوگ 

اس   نئے   دور   کے   آداب   نئے    ہیں    بزمی 
دوست  ہوتے  نہیں  سب  ہاتھ ملائے ہوئے لوگ

   کلام :سرفراز بزمی(  سوائی مادھوپور، راجستھان ، بھارت )

مزید :

شاعری -