منافع خور حکمران فیصلہ کریں بھارت سے آلو پیاز لینا ہے یا کشمیر، پرویزالٰہی

منافع خور حکمران فیصلہ کریں بھارت سے آلو پیاز لینا ہے یا کشمیر، پرویزالٰہی

  

لاہور(آن لائن)پاکستان مسلم لیگ کے سینئرمرکزی رہنما و سابق نائب وزیراعظم چودھری پرویزالٰہی نے مسئلہ کشمیر پر بھارت کی ہٹ دھرمی، مقبوضہ علاقہ میں ظلم و بربریت اور اسے فوجی چھاﺅنی میں تبدیل کرنے کی سخت ترین الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے اس پر پاکستانی حکمرانوں کی سردمہری پر بھی کڑی تنقید کی ہے۔ انہوں نے 27 اکتوبر 1947ءکو کشمیر میں فوجیں اتارنے کے بھارتی اقدام پر آج کے دن کو یوم سیاہ قرار دیتے ہوئے ایک بیان میں کہا کہ پاکستان کے تاجر اور منافع خور حکمران فیصلہ کر لیں کہ بھارت سے آلو پیاز لینا ہے یا مقبوضہ کشمیر۔ انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کو زیر تسلط رکھنے کیلئے وہاں آٹھ لاکھ سے زائد بھارتی فوج تعینات ہے جو کسی بھی علاقہ میں قابض فوج کی سب سے بڑی تعداد ہے۔ انہوں نے عالمی برادری پر اس جانب فوری توجہ دینے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ پاکستانی حکمرانوں کو سب سے پہلے کشمیر سے بھارتی فوجوں کی جلد از جلد واپسی کا مطالبہ کرنا چاہئے تاکہ وہاں بھارتی مظالم میں کمی آئے۔ انہوں نے خبردار کیا کہ کشمیریوں کی امنگوں اور مطالبات کے منافی سودے بازی کو کشمیری عوام قبول کریں گے اور نہ ہی پاکستان کے غیور عوام اس کی اجازت دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ مودی سرکار کو بھی چاہئے کہ وہ زمینی حقائق کو سامنے رکھتے ہوئے اربوں ڈالر کا اسلحہ خریدنے کی بجائے خطہ کے اس سب سے بڑے مسئلہ کو حل کرنے پر توجہ دے تاکہ وسائل کو سماجی مسائل کے حل پر صرف کر کے کروڑوں عوام کو غربت اور جہالت سے نجات دلائی جا سکے کیونکہ اس حقیقت سے انکار نہیں کیا جا سکتا کہ پاک بھارت امن کا راستہ کشمیر سے گزرتا ہے۔

پرویزالٰہی

مزید :

صفحہ اول -