بد نام سکول میں شرمناک کمرے کی موجودگی ،والدین روتے ہوئے عدالت پہنچ گئے

بد نام سکول میں شرمناک کمرے کی موجودگی ،والدین روتے ہوئے عدالت پہنچ گئے
بد نام سکول میں شرمناک کمرے کی موجودگی ،والدین روتے ہوئے عدالت پہنچ گئے

  

جکارتہ (نیوز دیسک)بڑے بڑے ،مشہور معروف اور مہنگے ترین سکول ہمارے بچوں کے لیے کتنے محفوظ ہیں ؟انڈونیشیا کے ایک معروف سکول میں ہونے والے بھیانک جرائم کے بعد ہم سب کے لیے اس سوال پر غور کرنا ضروری ہے ۔ ملک کے درالحکومت میں واقع جکارتہ انٹرنیشنل سکول کا شمار صرف انڈونیشیا نہیں بلکہ براعظم اشیاءکے بہترین سکولوں میں کیا جاتا ہے ۔ حال ہی میں یہ شرمناک انکشاف ہوا کہ اس سکول میں کئی سال ننھے بچوں کو بدترین جنسی زیادتی کا نشانہ بنایاجارہا ہے ۔ ایک پانچ سالہ بچے کو والدین نے جب نیند میں بڑبڑاتے اور چیختے چلاتے سناتو معاملے کی تحقیق کی جس پر معلو م کہ اسے صفائی کرنے والے ملازمین نے سکول کے ٹوائلٹ میں متعدد دفع زیادتی کا نشانہ بنایاتھا اورمعاملہ کو خفیہ رکھنے کے لئے اسے مار دینے کی دھمکیاں دی تھیں ۔پولیس کے تحقیقات میں معلوم ہوا کہ حقائق اس سے کہیں زیادہ شرمناک ہیں اور جلد ہی آٹھ دیگر بچوں کے بارے میں بھی معلوم ہو گیا کہ ان سے جنسی زیادتی کی گئی ۔ بعد میں مزید معلوم ہوا کہ بین الاقوامی زشہرت رکھنے والے اس سکول میں یہ حیوانیت کئی سالوں سے جاری ہے اور اس میںکئی اساتذہ بھی ملوث ہیں جنہوں نے سکول میں ایک خفیہ کمرہ اس درنگی کے لئے مخصوص کر رکھا تھا۔مغربی ممالک سے تعلق رکھنے والے کئی اساتذہ بھی یہاں کام کرتے ہیں جن میں سے ایک بچوں سے جنسی زیادتی کے جرم میں سزا ٰیافتہ بھی ہے۔گرفتار کئے گئے چھ لوگوں میں سے چار نے اعتراف جرم کیا ہے جبکہ ایک حراست کے دوران خودکشی کر چکاہے ۔ پولیس تاحال تحقیقات جاری رکھے ہوئے ہے اور مزید شواہد جمع کئے جا رہے ہیں ۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -