سعودی عرب کے 4.2ارب ڈالر کے پیکیج پر 3.2فیصد شرح سود، پاکستان اس وقت دنیا کا سستا ترین ملک ہے: شوکت ترین 

سعودی عرب کے 4.2ارب ڈالر کے پیکیج پر 3.2فیصد شرح سود، پاکستان اس وقت دنیا کا ...

  

         اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) مشیر خزانہ شوکت ترین نے کہا ہے کہ سعودی عرب نے 4.2 ارب ڈالر کا پیکج دیا ہے جس پر 3.2 فیصد شرح سود ادا کیا جائے گا۔وزیر توانائی حماد اظہر کے ہمراہ پریس کانفرنس میں وزیر خزانہ نے کہا کہ سعودی عرب سے گفتگو چل رہی تھی، معاہدے کے خدوخال اب طے ہوئے ہیں، وزیراعظم کے حالیہ دورے میں سعودی عرب نے منظوری دی۔انہوں نے کہا کہ ہم نے سعودی عرب سے 3 ارب سٹیٹ بینک میں ڈیپازٹ رکھنے کا کہا تھا، سعودی عرب نے 4.2 ارب ڈالر کاپیکج دیا ہے، یہ رقم ملنا ہمارے لیے مفید ہے، اس رقم کا آئی ایم ایف سے کوئی تعلق نہیں۔ شوکت ترین نے کہا  کہ دنیا میں سب سے سستا ملک پاکستان ہے،آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدے کے قریب پہنچ چکے ہیں، اس معاہدے کی زیادہ تفصیل نہیں بتا سکتا،کورونا کی وجہ سے پوری دنیا معاشی مسائل کا شکار ہے، معاشی تیزی کیلئے اقدامات کے اثرات کھانے پینے اور دیگر اشیاپر مرتب ہوئے،امید ہے اگلے 6 ماہ تک دنیا بھر میں قیمتیں کم ہوں گی۔ شوکت ترین نے کہا کہ آئی ایم ایف کے ساتھ اصول اور پالیسی سطح کے مذاکرات ہوتے ہیں، آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدے کے قریب پہنچ چکے ہیں، آئی ایم ایف پروگرام کا مارکیٹ میں مثبت اثر آئے گا، اس معاہدے کی زیادہ تفصیل نہیں بتا سکتا۔، سعودی عرب ماہانہ 10 کروڑ ڈالر مالیت کا تیل موخر ادائیگیوں پر فراہم کرے گا، سعو۔شوکت ترین نے کہا کہ ہماری آمدنی کم ہے، اب جو تقابلی جائزہ آیا ہے اس میں پاکستان سستا ترین ملک ہے، تیل کی قیمتوں کے دبا ؤکے باوجود عوام کو سہولتیں دے رہے ہیں، ماضی میں تیل پر لیوی لی جاتی تھی۔ اس موقع پر حماد اظہر نے کہا کہ کورونا کی وجہ سے پوری دنیا معاشی مسائل کا شکار ہے، معاشی تیزی کیلئے اقدامات سے اثرات کھانے پینے اور دیگر اشیاپر مرتب ہوئیں، دنیا بھر میں کھانے پینے اور انرجی مصنوعات کی قیمتیں تیزی سے بڑھیں،غریب ہو یا امیر ملک ہر جگہ قیمتیں بڑھی ہیں،امید ہے اگلے 6 ماہ تک دنیا بھر میں قیمتیں کم ہوں گی۔ تیل کی قیمتوں میں 450ارب روپے کا ریلیف دے چکے ہیں، دیگر تمام ممالک کی نسبت پاکستان میں تیل کی قیمتیں قدرے کم ہیں، حکومت نے گیس کی قیمتیں کنٹرول کی ہیں اور یوریا کھاد کی قیمتیں بھی نہیں بڑھنے دی گئیں۔ حماد اظہر  نے کہا  ہے کہ پاکستان میں پانی سے 64 ہزار میگاواٹ بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت ہے،اس وقت ملکی توانائی کا 29 فیصد حصہ پانی سے بجلی کی پیداوار کا ہے،ماضی کی حکومتوں نے درآمدی فیول کے منصوبوں پر توجہ مرکوز رکھی۔ بدھ کو ہائیڈرو کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے   حماد اظہر  نے کہا سال 2030 تک ملکی توانائی میں پن بجلی کا حصہ 29 فیصد سے 43 فیصد تک بڑھایا جائے گا،پن بجلی کے فروغ کیلئے ملکی تاریخ میں پہلی بار گلگت بلتستان پاور پالیسی تشکیل دی جا رہی ہے۔

مشیر خزانہ

مزید :

صفحہ اول -