"ریاست کو کوئی ڈکٹیٹ نہیں کرسکتا" حکومت نے ایک بار پھر دوٹوک اعلان کردیا 

"ریاست کو کوئی ڈکٹیٹ نہیں کرسکتا" حکومت نے ایک بار پھر دوٹوک اعلان کردیا 

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان  آن لائن ) وزیر مملکت فرخ حبیب نے کہا ہے کہ  ناموس رسالتﷺ کے معاملے کو وزیراعظم نے دنیا بھر میں اجاگر کیا، اگر کوئی بیرون ملک ہماری دل آزاری کرتاہے تو کیا اپنے لوگوں کو مارنا جائز ہے؟ریاست کو کوئی ڈکٹیٹ نہیں کرسکتا، جب سڑکیں بلاک کی جائیں اور املاک کو نقصان پہنچایا جائے، اس وقت کوئی معاہدہ نہیں رہتا، معاہدہ اس وقت ہوتا ہے جب معاہدے کی پاسداری ہوتی ہے، غیر قانونی فارن فنڈنگ ثابت ہوئی تو ن لیگ پر پابندی لگ سکتی ہے،

 اسلام آ باد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئےوزیر مملکت برائے اطلاعات و نشریات نےکہا کہ حکومت کی اولین ترجیح یہ ہے کہ ہم کسی کو اجازت نہیں دے سکتے کہ وہ ریاست کو ڈکٹیٹ کرے اور لوگوں کے جان و مال کو خطرے میں ڈالے،ناموس رسالتﷺ کے معاملے کو وزیراعظم عمران خان نے دنیا کے بڑے بڑے فورمز پر بھرپور انداز میں پیش کیا ،ابھی حال ہی میں رحمت اللعالمین اتھارٹی کا قیام عمل میں لایا گیا اور ربیع الاول کے مہینے میں عشرہ رحمت اللعالمین ﷺ منایا گیا ،میں سمجھتا ہوں کہ اس معاملے میں تمام لوگوں کو ریاست کے ساتھ کھڑا ہونا چاہئے،ناموس رسالتﷺ کے معاملے کو دنیا کے سامنے پیش کرنے سے ہم کسی صورت پیچھے نہیں ہٹ سکتے ،لیکن ہمیں اپنا طریقہ کار بھی درست کرنے کی ضرورت ہے،یہ نہیں ہو سکتاکہ ہماری دل آزارہ باہر کے ممالک  سے ہو اور ہم یہاں پر لوگوں کی گاڑیاں جلانی شروع کردیں،کسی انسان کو ناحق قتل کرنا شروع کردیں،کیا ہمارا اسلام ہمیں اس بات کی اجازت دیتا ہے؟سنت رسولﷺ تو یہ ہے کہ راستے کا پتھر بھی ہٹایا جائے اور راستوں میں رکاوٹیں نہ کھڑی کی جائیں ،ناموس رسالتﷺ کے ایشو پر جتنا کام اس حکومت نے کیا ہے ،ماضی میں اس کی نظیر نہیں ملتی،آج کالعدم تنظیم کے شرپسندوں کی جانب سے پولیس اہلکاروں کو سیدھی گولیاں ماری جا رہی ہیں، ان کے گھروں میں صف ماتم بچھا ہے، ہم کالعدم جماعت کی ہر جائز بات سننے کو تیار ہیں لیکن یہ بات سب کو یاد رکھنی چاہئے کہ ریاست کو کوئی بھی گروہ اور جتھہ ڈکٹیٹ نہیں کر سکتا ۔ 

انہوں نے کہا کہ پیپلزپارٹی، ن لیگ اکاؤنٹس کی تفصیلات کیلئے درخواست دی تھی، تین سال میں ن لیگ کے اکاوؤنٹس میں 45 کروڑ روپے آئے، جماعتوں کے اکاؤنٹس کی جانچ پڑتال الیکشن کمیشن کی ذمہ داری ہے،عدالت کا فیصلہ تھا سیاسی جماعتوں کے اثاثوں کی چھان بین کریں، سیاسی جماعتیں اثاثوں کے بارے میں ریکارڈ الیکشن کمیشن میں جمع کرانے کی پابند ہیں،ہم نے ن لیگ کے پارٹی اکاؤنٹس پر مالیاتی ماہرین کے اعتراضات الیکشن کمیشن میں جمع کرا دئیے ہیں،  پیپلز پارٹی کے اکاؤنٹس کی جانچ پڑتال بھی کرنی ہے انہیں بھی حساب دینا ہوگا۔

 فرخ حبیب کا کہنا تھا کہ چار روز سے فنانشل ایکسپرٹ ن لیگ اور پیپلز پارٹی کے اکاؤنٹس کا جائزہ لے رہے ہیں، ہماری ٹیم کے مطابق 45 کروڑ روپے کا ڈیٹا نہیں ملا،تین کروڑ روپے بھون داس نامی شخص نے دیئے ہوئے ہیں، پیسہ بینک میں کراس چیک کے ذریعے آیا ہوگا، اس کی رسیدیں نہیں ہیں، پانامہ کیس میں فلیٹ کی مالیت مان لیں لیکن رسیدیں نہ دیں، رسیدوں کے نام پر ن لیگ نے قطری خط پیش کر دیا,مریم صفدر الیکشن کمیشن احتجاج کے لیے تو آجاتی ہیں اب اپنی رسیدیں بھی دیں،نواز شریف نے تو پارٹی فنڈ کو بھی نہیں چھوڑا، عوام کے سامنے آنا چاہئیے کہ کون کون ان کو فنڈنگ کرتا رہا ہے؟رسید یں نہ دینے پر یہ ہمارے شک کو یقین میں بدل رہے ہیں،۔

مزید :

قومی -اہم خبریں -