ایل پی جی مافیا اور بلیک میں سیل کرنیوالوں کیخلاف کریک ڈاﺅن کا فیصلہ

ایل پی جی مافیا اور بلیک میں سیل کرنیوالوں کیخلاف کریک ڈاﺅن کا فیصلہ

  



لاہور( لیاقت کھرل) وزیر اعظم پاکستان نے ایل پی جی کی بلیک مارکیٹنگ کا سخت نوٹس لے لیا ہے اور ایل پی جی مافیا کی لوٹ سیل کو حوالے سے ”پاکستان“ میں شائع ہونے والی خبر کا نوٹس لے کر اوگرا کو سخت کارروائی کرنے کی ہدایت کر دی ہے، جس کے بعد اوگرا کے چیئرمین نے ایل پی جی کی بلیک مارکیٹنگ کے خلاف کریک ڈاﺅن کا حکم دے دیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ایل پی جی کی بلیک مارکیٹنگ کے خلاف لاہور سمیت پورے ملک میں کل سے کریک ڈاﺅن کیا جا رہا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم پاکستان نے ایل پی جی کی بلیک مارکیٹنگ اور لوٹ سیل کے حوالے سے ”پاکستان“ میں شائع ہونے والی خبر کا سخت نوٹس لے لیا ہے اور اس حوالے سے چیئرمین اوگرا کو ایل پی جی مافیا کے خلاف ہنگامی بنیادوں پر کارروائی کا حکم دیا گیا ہے۔ ”پاکستان“کو وزارت پٹرولیم اور اوگرا کے ذرائع نے بتایا ہے کہ ایل پی جی کی بلیک مارکیٹنگ کے خلاف کریک ڈاﺅن کا فیصلہ وزیر اعظم کے حکم پر کیا گیا ہے ۔ایل پی جی کی مارکیٹنگ کمپنیوں کی لوٹ سیل روکنے کے لئے چیئرمین اوگرا سعید احمد خان کی صدارت میں ہونے والے ایک اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے ۔ اجلاس میں گلگت بلتستان سمیت چاروں صوبوں سے انتظامیہ اور پولیس کے افسران نے شرکت کی۔ لاہور میں ڈی سی او لاہور کی نگرانی میں ٹاﺅنز کی سطح پر چھاپہ مار ٹیمیں قائم کی گئی ہیں جو کہ روزانہ کی بنیاد پر ایک سے دو ٹاﺅنز میں کریک ڈاﺅن کریں گئیں۔ اور یہ مہم ایل پی جی کی بلیک مارکیٹنگ کے خاتمہ تک مسلسل جاری رہے گی اور اس میں ڈی سی او سربراہ ہوں گے، جبکہ تھانوں کی پولیس بھی کریک ڈاﺅن اور کارروائی میں ساتھ موجود ہو گی ۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم ایل پی جی کی بلیک مارکیٹنگ کے حوالے سے کی جانے والی کارروائی کے بارے باقاعدہ آگاہ کرنے کا بھی حکم دیا گیا ہے۔

ایل پی جی

مزید : صفحہ آخر