اقوام متحدہ مناسب جگہ نہیں ،پاکستان کشمیر کی بات ہم سے کرے ،مودی

اقوام متحدہ مناسب جگہ نہیں ،پاکستان کشمیر کی بات ہم سے کرے ،مودی

  

                           نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) بھارت کے وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا ہے کہ مسئلہ کشمیر دو طرفہ معاملہ ہے، اس پر پاکستان ہم سے براہ راست بات چیت کرے ،اقوام متحدہ مسئلہ کشمیر پر بحث کرنے کا مناسب فورم نہیں اور نہ ہی کوئی متنازع معاملہ یہاں اٹھایا جانا چاہئے۔ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے سالانہ اجلاس سے خطاب میں انہوں نے کہا کہ کسی بھی ملک کی قسمت اس کے ہمسایوں سے جڑی ہوتی ہے،پاکستان کے ساتھ پر امن باہمی مذاکرات پر تیار ہیں، ایک ایسا پر امن ماحول جس پر دہشت گردی کے سائے نہ ہوںلیکن خطے پر دہشت گردی کے بادل منڈلا رہے ہیںاور پاکستان کو پر امن اور ساز گار ماحول پیدا کرنے کے لئے ذمہ داری لینا ہو گی، بھارت نے ہمیشہ پاکستان کی طرف دوستی کا ہاتھ بڑھایا ہے، ہماری حکومت آئی تو ہم نے بھی ان کوششوں کو جاری رکھا لہذاٰ جب کشمیر میں سیلاب آیا تو ہم نے پاکستان کو امداد کی پیش کش کر کے اس کا عملی ثبوت بھی دیا۔ ان کا کہنا تھا کہ بھارت میں ایک تاریخی تبدیلی کا آغاز ہوا ہے، ایسی تبدیلی بھارت میں کبھی نہیں دیکھی گئی، دنیا کے ہر ملک کا ایک نظریہ ہوتا ہے اور بھارت ہمیشہ سے ہی دنیا میں امن و آشتی اور دوستانہ تعلقات کا خواہاں رہا ہے، بھارت نے ہمیشہ دنیا میں بہتر مواقع کی فراہمی کی بات کی ہے اور اس ضمن میں کئی قربانیاں بھی دی ہیں، ہم آئندہ بھی مل جل کر کام کرنے پر زور دیتے رہیں گے کیونکہ ہم دنیا کو ایک خاندان کی طرح دیکھتے ہیں۔ نریندر مودی کا کہنا تھا کہ میں پہلی بار اس فورم پر بات کر رہا ہوں، یہاں بات کرنا میرے لئے اعزاز کی بات ہے،بھارت دنیا کی ایک بڑی آبادی ہے اور میں وہاںکا منتخب وزیر اعظم ہوں اس لئے سمجھتا ہوں کہ دنیا ہم سے کیا توقع کرتی ہے اور بھارتی عوام کی کیا ضروریات ہیں، ہم چاہتے ہیں یہ دنیا جی فور اور جی ایٹ سے آگے جی آل کی طرف جائے۔

مزید :

صفحہ اول -