دہشت گردوں کو سرحد پناہ گاہیں بنانے سے روکنا ہو گا ، جنرل راحیل

دہشت گردوں کو سرحد پناہ گاہیں بنانے سے روکنا ہو گا ، جنرل راحیل

  



راولپنڈی/لنڈی کوتل(اے این این) چیف آف آرمی سٹاف جنرل راحیل شریف نے کہا ہے کہ پوری قوم کو پاکستان کے دشمنوں کی کسی بھی کارروائی کے خلاف متحد ہونا چاہئے، دہشتگردوں کو سرحد کی دوسری طرف پناہ گاہیں بنانے سے روکنے کیلئے ہر سطح پر کام کرنے کی ضرورت ہے، دہشت گردی کے خلاف فوج کو پوری قوم کی حمایت حاصل ہے کیونکہ ہم سب نے مل کر دشمن کو ناکام بنانا ہے۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ(آئی ایس پی آر) کے مطابق جنرل راحیل نے عیدالاضحی مغربی سرحد پر تعینات افسروں اور جوانوں کے ہمراہ منائی اور فرائض کی انجام دہی میں ان کے حوصلوں کو سراہا۔جنرل راحیل شریف نے خیبر ایجنسی میں تعینات فوجی افسران جوانوں اور قبائلی عمائدین سے خطاب کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ دہشت گردوں کو سرحد پار بھی اپنی پناہ گاہیں بنانے سے روکنے کے لیے ہر سطح پر کام کرنے کی ضرورت ہے۔انھوں نے اس بات کو پھر دھرایا کہ دہشت گردی کے خلاف فوج کو پوری قوم کی حمایت حاصل ہے اور سب نے مل کر ریاست کے دشمنوں کو ناکام بنانا ہے۔واضح رہے کہ پاکستانی فوج نے گزشتہ سال جون میں شدت پسندوں کے مضبوط گڑھ شمالی وزیرستان میں عسکریت پسندوں کے خلاف ضرب عضب کے عنوان سے بھرپور کارروائی شروع کی تھی جس میں اب تک تین ہزار سے زائد ملکی و غیر ملکی دہشت گردوں کو ہلاک کرنے کا بتایا جا چکا ہے۔ضرب عضب کے علاوہ قبائلی علاقے خیبر ایجنسی میں بھی خیبر ون اور خیبر ٹو کے نام سے کارروائیاں کی گئی تھیں۔فوجی آپریشن شروع ہونے کے بعد سے ملک میں امن و امان کی مجموعی صورتحال میں ماضی کی نسبت قابل ذکر بہتری دیکھی گئی ہے لیکن اب بھی تشدد کے اکا دکا واقعات رونما ہوتے رہتے ہیں جنہیں حکام شدت پسندوں کے خلاف جاری کارروائیوں کا ردعمل قرار دیتے ہیں۔رواں ماہ ہی پشاور کے قریب بڈھ بیر میں فضائیہ کے ایک اڈے پر دہشت گردوں کے حملے میں کم ازکم 29 افراد ہلاک ہوگئے تھے جب کہ تمام 13 حملہ آوروں کو سکیورٹی فورسز نے ہلاک کر دیا تھا۔ایک روز قبل جنرل راحیل شریف نے پاکستان کے زیر انتظام کشمیر میں لائن آف کنٹرول کا دورہ کیا تھا اور وہاں تعینات اپنے فوجیوں سے خطاب میں ان کا کہنا تھا کہ لائن آف کنٹرول اور ورکنگ بانڈری پر بھارتی فورسز کی فائرنگ و گولہ باری سے دہشت گردی کے خلاف جاری جنگ سے پاکستان کی توجہ ہٹانے کی کوششیں ناکام ہوئی ہیں۔حالیہ مہینوں میں لائن آف کنٹرول اور ورکنگ بانڈری پر دونوں جانب سے فائرنگ و گولہ باری کا تبادلہ تواتر سے ہوتا رہا ہے جس کی وجہ سے پاکستان اور بھارت کے تعلقات ایک بار پھر تنا کا شکار ہیں۔دونوں ملک فائر بندی کی خلاف ورزی میں پہل کا الزام ایک دوسرے پر عائد کرتے ہیں۔

مزید : صفحہ اول


loading...