آٹوپارٹس مینوفیکچررز کی جانب سے سٹیل امپورٹ پر ریگولیٹری ڈیوٹی ختم کی جائے: لاہورچیمبر

آٹوپارٹس مینوفیکچررز کی جانب سے سٹیل امپورٹ پر ریگولیٹری ڈیوٹی ختم کی جائے: ...

  

لاہور (کامرس رپورٹر) لاہور چیمبر کے نومنتخب صدر ملک طاہر جاوید نے حکومت پر زور دیا ہے کہ وہ آٹوپارٹس مینوفیکچررز کو نقصان سے بچانے کے لیے فوری اقدامات اٹھائے جو ناموافق حالات کی وجہ سے شدید مشکلات میں ہیں۔ ایک بیان میں ملک طاہر جاوید نے کہا کہ آٹوپارٹس مینوفیکچررز لوگوں کو روزگار اور حکومت کو محاصل کی فراہمی کا بڑاذریعہ ہیں لیکن زیادہ پیداواری لاگت اور خام مال کی درآمد پر ڈیوٹیوں و ٹیکسوں کی وجہ سے ان کی بقاء داؤ پر لگی ہے۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ آٹوپارٹس مینوفیکچررز کی جانب سے سٹیل میٹریل کی درآمد پر عائد ریگولیٹری ڈیوٹی ختم کی جائے۔

کیونکہ یہ مقامی سطح پر دستیاب نہیں۔ انہوں نے کہا کہ 2015ء میں سٹیل امپورٹ پر ریگولیٹری ڈیوٹی کا ریٹ پانچ فیصد سے پندرہ فیصد تھا، اگلے سال اسے بڑھاکر پندرہ سے پینتیس فیصد کردیا گیا جس کی وجہ سے اعلی معیار کے آٹوپارٹس مینوفیکچررز اور انجینئرنگ پروڈکٹس کی پیداواری لاگت میں بھاری اضافہ ہوگیا۔ لاہور چیمبر کے نومنتخب صدر نے کہا کہ اگرچہ ریگولیٹری ڈیوٹی کے نفاد کا جواز مقامی سٹیل انڈسٹری کو تحفظ دینا پیش کیا جارہا ہے لیکن یہ زیادہ تر تعمیراتی سٹیل تیار کرتی ہے۔ نتیجتاً آٹوپارٹس مینوفیکچرنگ سیکٹر دیوار سے جالگا ہے۔ انہوں نے حکومت پر زور دیا کہ وہ آٹوپارٹس مینوفیکچررز کو سٹیل میٹریل کی درآمد پر عائد ریگولیٹری ڈیوٹی سے مثتثنیٰ قرار دے کیونکہ اس سے مینوفیکچررز کی حوصلہ شکنی اور سمگلنگ جیسے اقدامات کی حوصلہ افزائی ہورہی ہے۔ مزید برآں اگر یہ ریگولیٹری ڈیوٹی واپس نہیں لی جاتی تو پارٹس وینڈرز اوریجنل ایکویپمنٹ مینوفیکچررز کو سپلائی کرنے سے قاصر رہیں گے۔

مزید :

کامرس -