اپوزیشن لیڈر کی تبدیلی کیلئے جوڑ توڑ ، شاہ محمود کے نا م پر پی ٹی آئی تقسیم ، جماعت اسلامی ، مسلم لیگ (ق) ، شیر پاؤ کا کورا جواب ، یہ عمران خان کیخلاف سازش ہے : خورشید شاہ

اپوزیشن لیڈر کی تبدیلی کیلئے جوڑ توڑ ، شاہ محمود کے نا م پر پی ٹی آئی تقسیم ، ...
 اپوزیشن لیڈر کی تبدیلی کیلئے جوڑ توڑ ، شاہ محمود کے نا م پر پی ٹی آئی تقسیم ، جماعت اسلامی ، مسلم لیگ (ق) ، شیر پاؤ کا کورا جواب ، یہ عمران خان کیخلاف سازش ہے : خورشید شاہ

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) تحریک انصاف کے اراکین قومی اسمبلی میں شاہ محمود قریشی کو اپوزیشن لیڈر کا امیدوار بنانے پر تقسیم ہوگئے ہیں اور شاہ محمود قریشی اور جہانگیر ترین گروپ آمنے سامنے آ گئے ہیں۔ ترین گروپ نے صرف عمران خان کو اپوزیشن لیڈر ما ننے کا اعلان کر دیاہے، جماعت اسلامی ، مسلم لیگ ق اور قومی وطن پارٹی نے تحریک انصاف کی قومی اسمبلی میں نیا اپوزیشن لیڈر لانے کیلئے ساتھ نہ دینے کا کورا جواب دیدیا ہے جبکہ عمران خان نے میڈیا اسٹریجی کمیٹی کا اجلاس آج بنی گالہ میں طلب کر لیا ہے جس میں اپوز یشن لیڈر کی تبدیلی، شریف فیملی کیخلاف نیب مقدمات، سیاسی امور، ایم کیوایم کی قیادت سے مذاکرات و دیگر معاملات کا جائزہ لیکر حکمت عملی طے کی جائے گی، انکا یہ بھی کہنا تھا اپوزیشن لیڈر میں ہوں یا شاہ محمود ،موجودہ قائد حزب اختلاف کی تبدیلی ضروری ہے۔ تفصیلات کے مطابق شاہ محمود قریشی کو قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر بنانے کے معاملے پر تحریک انصاف میں ا ختلا فات پیدا ہوگئے ہیں اوربعض پی ٹی آئی اراکین نے شاہ محمود کو اپوزیشن لیڈر کا امیدوار نامزد کرنے پر سخت نارا ضگی کا اظہار کرتے ہو ئے فیصلہ تسلیم کرنے سے انکار کردیا ہے۔ذرائع کا کہنا ہے 20 ستمبر کو تحریک انصاف کی پارلیمانی پارٹی کے اجلاس میں عمران خان کو قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف بنانے پر اتفاق رائے ہوا تھا اورپی ٹی آئی ارکان نے فیصلہ کیا تھا اپوزیشن لیڈر صرف عمران خان ہی ہونگے،ذرائع کا کہنا ہے شاہ محمود قریشی کی ایم کیوایم کی قیا د ت سے ملاقات میں انہیں اپوزیشن لیڈر بنانے کا تاثردیا گیا تو کراچی کی مقامی قیا د ت اور خیبر پختونخوا کے بعض ارکان معترض ہو گئے ،کر ا چی سے رہنما عمران اسماعیل نے شاہ محمود کو اپوزیشن لیڈر بنانے پر تحفظات کااظہار کیا اور کہا ایم کیوایم کیساتھ ملنے پر کارکنوں کا سخت ردعمل آئے گا جس سے پارٹی قیا د ت اور ورکرز میں تناؤکی کیفیت ہوگی جو پارٹی کیلئے نقصان دہ ہے ۔انہی خدشات کا اظہار خیبرپختونخوا سے منتخب ارکان اسمبلی بھی کررہے ہیں جو شاہ محمود کی ایم کیو ا یم سے ملاقات پر ناخوش ہیں اور ان کا مطالبہ ہے عمران خان کو خود قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر کا کردار ادا کرنا چا ہیے، جبکہ ناراض ارکان نے صورتحال کا جائزہ لے کر حتمی فیصلہ کرنے کیلئے پارلیمانی کمیٹی کا اجلاس بلانے کا مطالبہ کیا ہے ۔ دو سر ی جانب پی ٹی آئی ذرائع کا کہنا ہے شاہ محمود قریشی کو اپو ز یشن لیڈر کا امیدوار بنانے کی خبریں بے بنیاد ہیں، دریں اثناء شاہ محمود قریشی نے گزشتہ روزملتان سے ٹیلی فونک رابطہ کر کے عمران خان کو ایم کیوایم کی قیادت سے ہونیوالے مذاکرات پر اعتماد میں لے لیا ہے، اس صورتحال سے چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے نمٹنے کیلئے میڈیا اسٹریجی کمیٹی کا اجلاس آج بنی گالہ طلب کر لیاہے ۔ اجلاس میں اپوزیشن لیڈر کی تبدیلی، شریف فیملی کے خلاف نیب مقدمات، سیاسی امور، ایم کیوایم کی قیادت سے مذاکرات اور دیگر معا ملا ت کا جائزہ لیکر حکمت عملی طے کی جائے گی،دوسری طرف اپوزیشن لیڈر کی تبدیلی کے معاملے پر تحریک انصاف نے ایم کیو ایم کی قیادت سے ملاقات کے بعد دیگر جما عتو ں سے بھی رابطے کر کے ملاقات کا وقت طے کر لیا۔ جماعت اسلامی اور تحریک انصاف کی قیادت کے درمیان 3 اکتوبر کو اسلام آباد میں ملاقات ہوگی جبکہ چوہدری شجاعت حسین کیساتھ آج ملاقات کا وقت طے کر لیا جائے گا۔تاہم ذرائع کا کہنا ہے قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر کی تبدیلی کے حوالے سے جماعت اسلامی (جے آئی)، قومی وطن پارٹی (کیو ڈبلیو پی) اورمسلم لیگ ق نے پی ٹی آئی کا سا تھ دینے سے انکار کر دیا ہے۔ ق لیگ کو شکایت ہے کہ اسے اعتماد میں نہیں لیا گیا ، جماعت اسلامی کا مؤقف ہے کہ فی الحال قائد حزب اختلا ف کی تبدیلی نہیں چاہتے۔ قومی وطن پارٹی کے سربراہ آفتاب شیرپاؤ کا کہنا ہے خورشید شاہ کی تبدیلی نہیں چاہتے، خورشید شاہ نے بطور اپوزیشن لیڈر اچھا کردار ادا کیا اس لئے خورشید شاہ کی تبدیلی کی حمایت نہیں کریں گے۔واضح رہے تحریک انصاف اور ایم کیوایم پاکستان قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر کی تبدیلی کیلئے سرگرم ہیں جس کیلئے دونوں جماعتوں کے درمیان گزشتہ روز با ضا بطہ ملاقات ہوئی اور اپوزیشن لیڈر کی تبدیلی پر اتفاق کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی کو قائد حزب اختلاف بنانے کا فیصلہ کیا گیا ۔

پی ٹی آئی تقسیم

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشیدشاہ نے کہا ہے اپوزیشن لیڈر کی تبدیلی عمران خان کیخلاف سازش ہے اور شاہ محمود قریشی کی نظر میری نہیں عمران خان کی کرسی پر ہے۔گزشتہ روزنجی ٹی وی چینل سے خصوصی گفتگومیں خورشید شاہ کا کہناتھا پی ٹی آئی والے بات جمہوریت کی کرتے ہیں اورہماری اکثریت ماننے کو تیارنہیں،ہم نے کبھی مک مکا نہیں کیا،آئین کے مطابق مشاورت کی ہے۔ تحریک انصاف کا بہانہ کوئی اورایجنڈاکوئی اورہے،پی ٹی آئی کھل کر بات کرے۔ تحریک انصاف ہمیں بتائے اپوزیشن لیڈر بدلنے کی ضرورت کیوں پیش آئی ؟ جن سے ووٹ مانگے جارہے ہیں،وہ بھی تحریک انصاف سے یہی سوال کررہے ہیں۔مجھے کوئی فکرنہیں جمہوری آدمی ہوں،عمران خان اپنی فکر کریں کیونکہ شاہ محمودقریشی کی نظرمیری کرسی پرنہیں عمران خان پرہے۔ شاہ محمود قریشی اصل میں اپنے قائد کی جگہ لیناچاہتے ہیں،میری سمجھ میں نہیں آرہا کوئی بندہ اپنے پارٹی قائدکے ہوتے ہوئے بڑاعہداکیسے مانگ سکتاہے۔

خورشید شاہ

مزید :

صفحہ اول -