چارسدہ ،جید علماء کرام نے لاؤڈ سپیکر پر درس قرآن پر پابندی مسترد کردی

چارسدہ ،جید علماء کرام نے لاؤڈ سپیکر پر درس قرآن پر پابندی مسترد کردی

  

چارسدہ (بیورو رپورٹ)چارسدہ کے جید علمائے کرام نے لاؤڈ سپیکر پر درس قرآن کی پابندی مسترد کر دی ۔ نیشنل ایکشن پلان کے آڑ میں قرآن و حدیث کی درس و تدریس پر پابندی حکومت کا منافقانہ طر ز عمل ہے ۔ علمائے حق محب وطن ہے اور جمہوری نظام کے اندر نفاذ شریعت کیلئے سر گرم عمل ہے ۔ صوبائی حکومت ایک طرف آئمہ کرام کو تنخواہ دینے کا اعلان جبکہ دوسری طرف قرآن و حدیث کی اشاعت و ترویج پر پابندی لگا رہی ہے ۔ مولانا سید گوہر شاہ ۔ تفصیلات کے مطابق دار العلوم اسلامیہ چارسدہ میں حکومت کی طر ف سے لاؤڈ سپیکر پر قرآن و حدیث کی درس و تدریس پر پابندی کے حوالے ضلع بھر کے تمام دینی مدارس کے ذمہ داران کا غیر معمولی اجلاس زیر صدارت سابق رکن قومی اسمبلی و صدر تحفظ مدارس مولانا غلام محمد صادق منعقد ہوا۔ اجلاس سے خطاب کر تے ہوئے رکن قومی اسمبلی مولانا سید گوہر شاہ ، سابق رکن قومی اسمبلی مولانا غلام محمد صادق ، سابق ایم پی اے مولانا محمد ادریس ، مولانا عبدالرؤف شاکر ، مولانا محمد ہاشم خان اور دیگر نے حکومت کی طرف سے مساجد و مدارس میں لاؤڈ سپیکر کے استعمال پربے جاء پا بندی کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کے منافقانہ طر ز عمل کے خلاف بھر پور احتجاج کیا جائیگا۔ صوبائی حکومت ایک طرف آئمہ کرام کو تنخواہ دینے کی بات کر تی ہے جبکہ دوسری طرف درس قرآن و حدیث پر پابندی لگا رہی ہے ۔ انہوں نے کہاکہ قانون کی نظر میں سب برابر ہے مگر صوبائی حکومت چوکوں ، چوراہوں اور شادی ہالوں میں دن رات لاؤڈ سپیکر کے استعمال پر گونگی بہری نظر آتی ہے مگر علمائے کرام اور دینی حلقوں کو پریشان کرنے کیلئے آئے روز مساجد اور مدارس پر بے جا چھاپے لگائے جا رہے ہیں جس کے خلاف ہم کسی صورت خاموش نہیں بیٹھ سکتے ۔ انہوں نے کہاکہ نیشنل ایکشن پلان کے آڑ میں درس قرآن و حدیث پر پابندی بیرونی ایجنڈا ہے جس کے خلاف اسمبلی کے اندر اور باہر بھر پور مزاحمت کی جائیگی ۔ علمائے حق سچے ، کھرے اور محب وطن پاکستانی ہے جو جمہوری نظام کے اندر باوقار انداز میں نفاذ اسلام کیلئے جدو جہد پر یقین رکھتی ہے ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -