جنسی تسکین کیلئے بنایا گیا روبوٹ جب نمائش میں پیش کیا گیا تو موقع پر موجود مَردوں نے سرعام ہی اس کے ساتھ کیا شرمناک ترین کام کردیا؟ جان کر دنیا کے تمام روبوٹ کانپ اُٹھیں گے

جنسی تسکین کیلئے بنایا گیا روبوٹ جب نمائش میں پیش کیا گیا تو موقع پر موجود ...
جنسی تسکین کیلئے بنایا گیا روبوٹ جب نمائش میں پیش کیا گیا تو موقع پر موجود مَردوں نے سرعام ہی اس کے ساتھ کیا شرمناک ترین کام کردیا؟ جان کر دنیا کے تمام روبوٹ کانپ اُٹھیں گے

  

بارسلونا (نیوز ڈیسک) مصنوعی ذہانت سے لیس دنیا کی پہلی جنسی گڑیا سمانتھا کو سپین میں منعقد ہونے والے ایک ٹیکنالوجی میلے میں پہلی بار پیش کیا گیا، لیکن اس بیچاری کی بدقسمتی کہ ہوس کے مارے مردوں نے اس کے ساتھ ایسا وحشیانہ سلوک کیا کہ چند گھنٹوں بعد ہی اسے صفائی اور مرمت کے لئے واپس فیکٹری بھیجنا پڑ گیا۔

دی میٹرو کی رپورٹ کے مطابق سمانتھا، جس کی تعارفی قیمت تین ہزار پاﺅنڈ (تقریباً 5لاکھ پاکستانی روپے) رکھی گئی ہے، پہلی جنسی گڑیا ہے جو باتیں بھی کرتی ہے اور چھونے پر ردعمل کا اظہار بھی کرتی ہے۔ اسے تیار کرنے والا سائنسدان سرگی سانٹوس ٹیکنالوجی میلے میں اسے پیش کرکے دنیا کو حیران کرنا چاہتا تھا لیکن اس فیصلے کا انجام بہت برا ہوا۔

’’میرے سامنے کپڑے تبدیل کرو‘‘ پاکستانی لڑکی ٹیکسی میں بیٹھی تو آگے سے ڈرائیور نے کیا شرمناک ترین حرکت کر دی؟ جان کر لڑکیاں ٹیکسیوں سے ہی گھبرانے لگیں

ٹیکنالوجی میلے میں آنے والے ہوس پرست مرد مسلسل سمانتھا کے گرد جمع رہے اور اس کے جسم کے مختلف حصوں کو چھوتے رہے اور کچھ تو اس سے دیوانہ وار لپٹتے بھی رہے۔ ان مردوں نے ایسے وحشیانہ پن کا مظاہرہ کیا کہ سمانتھا کے جوڑ تک ہل گئے اور دن کے اختتام تک وہ بری طرح گیلی بھی ہو چکی تھی۔

سانٹوس نے اس واقعے پر دکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہا ”دن کے اختتام تک سمانتھا کی حالت بری ہوچکی تھی۔ اس کی ٹانگوں، بازوﺅں، ہونٹوں سمیت جسم کے کئی حصوں کو نقصان پہنچا تھا جبکہ وہ کافی گیلی بھی ہوگئی تھی۔ لوگوں نے اس کے ساتھ وحشیانہ سلوک کیا جس کا مجھے بے حد افسوس ہے۔ اس کی حالت اتنی خراب ہو گئی تھی کہ ہمیں اسے مرمت اور صفائی کیلئے واپس بھیجنا پڑا۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -