ٹیکسٹائل سیکٹر کو حائل تمام رکاوٹوں کا خاتمہ اولین ترجیح ہے : گورنر سندھ

ٹیکسٹائل سیکٹر کو حائل تمام رکاوٹوں کا خاتمہ اولین ترجیح ہے : گورنر سندھ

کراچی ( این این آئی) گورنرسندھ عمران اسماعیل نے کہا ہے کہ صنعتی شعبہ کی بہتری حکومت کی اولین ترجیح ہے ، پانی و گیس اور ٹیکسٹائل سیکٹر کو حائل دیگر رکاوٹوں سے متعلق وزیر اعظم پاکستان کے علم میں لاؤں گا اور متعلقہ وزارت سے بات کرکے ان مسائل کے حل کو ہر صورت یقینی بنایا جائے گا اس ضمن میں آل پاکستان ٹیکسٹائل ملز ایسوسی ایشن ( ایپٹما) ایک جامع رپورٹ تیار کرے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایپٹماسندھ بلوچستان ریجن کے دفتر کے دورہ کے دوران کیا ۔ اس موقع پر ریجن کے صدر آصف امین اور دیگر عہدیدار بھی موجود تھے ۔ گورنرسندھ نے کہا کہ ٹیکسٹائل صنعت کی قومی معیشت میں کلیدی اہمیت حاصل ہے اس صنعت سے دیگر شعبہ جات بھی منسلک ہیں جہاں پر لاکھوں افراد روزگار سے وابستہ ہیں وزیر اعظم پاکستان کی ہدایت پر وفاقی وزیر خزانہ نے صنعتی شعبہ کی بہتری کے لئے کام شروع کردیا ہے ۔ ایک سوال کے جواب میں گورنر سندھ نے کہا کہ گیس کی کمی کو ایل این جی کے ذریعہ پورا کرنے کے لئے کام کررہے ہیں ایل این جی کے معاہدے سب کے سامنے ہونگے جس میں ہر ایک حصہ لے سکے گا تاکہ معاہدوں میں شفافیت کے عمل کو برقرار رکھا جاسکے ۔ایک اور سوال کے جواب میں عمران اسماعیل نے کہا کہ پانی کی کمی کا پورے ملک کو سامنا ہے جبکہ کراچی اس سے زیادہ متاثر ہو رہا ہے اس مسئلہ کے حل کے لئے مختلف منصوبوں میں کام جاری ہے جس میں سمندری پانی کی ڈی سیلینیشن کے لئے وزیر اعظم کی ہدایت پر ڈی ایچ اے ، پورٹ قاسم اور کے پی ٹی کے زیر نگرانی 200 ،200 ملین گیلن کے تین پلانٹس کے منصوبہ پر کام جلد شروع کردیا جائے گاجبکہ صنعتوں کے لئے استعمال شدہ پانی کو ری سائیکل کرنے کے منصوبہ پر بھی کام کا جلد آغاز ہوگا ۔ انہوں نے کہا کہ صنعتی علاقوں میں انفرااسٹرکچر بہتر بنانے سے صنعتی فعالیت یقینی ہے ، برآمدات و در آمدات میں بھی انفرااسٹرکچر کی کلیدی اہمیت ہوتی ہے اس ضمن میں نادرن بائی پاس کو 6 لین کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔

تاکہ آمد و رفت میں مزید تیزی آسکے ۔ ایک اور سوال کے جواب میں گورنرسندھ نے کہا کہ کپاس کے بیجوں کے معیار کو بہتر بنانے کے لئے متعلقہ اداروں سے بات کروں گا ۔

مزید : کامرس