انتخابات میں دھاندلی کے الزمات ،وزیر اعظم عمران خان نے تحقیقاتی کمیٹی کے سربراہ کے لئے ایسے نام کی منطوری دے دی کہ اپوزیشن جماعتیں سر پکڑ کر بیٹھ جائیں گی

انتخابات میں دھاندلی کے الزمات ،وزیر اعظم عمران خان نے تحقیقاتی کمیٹی کے ...
انتخابات میں دھاندلی کے الزمات ،وزیر اعظم عمران خان نے تحقیقاتی کمیٹی کے سربراہ کے لئے ایسے نام کی منطوری دے دی کہ اپوزیشن جماعتیں سر پکڑ کر بیٹھ جائیں گی

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)مسلم لیگ ن اور اپوزیشن کی دیگر جماعتوں کی جانب سے عام انتخابات 2018 میں دھاندلی کے الزامات پر وزیر اعظم عمران خان نے انتخابات میں مبینہ دھاندلی کی تحقیقات کے لئے خصوصی کمیٹی کے سربراہ کے نام کی منظوری دے دی، وزیر دفاع پرویز خٹک خصوصی کمیٹی کے سربراہ ہوں گے، کمیٹی  مکمل اختیارات کے ساتھ  عائد کردہ دھاندلی کے الزامات کی جانچ پڑتال کرے گی،کمیٹی میں اراکین قومی اسمبلی اور سنیٹرز شامل ہوں گے جبکہ حکومت اور اپوزیشن کے 12،12 اراکین کمیٹی کا حصہ ہوں گے۔

تفصیلات  کے مطابق عام انتخابات 2018 میں مبینہ دھاندلی کی کمیٹی کے قیام کے معاملہ پر وزیراعظم عمران خان نے وزیر دفاع پرویز خٹک  کو خصوصی کمیٹی کا سربراہ مقرر کرنے کی منظوری دے دی ہے،کمیٹی میں حکومت اور اپوزیشن کے 12،12ارکان شامل ہوں گے۔ حکومت اور اپوزیشن نے اپنے اپنے اراکین کے نام سپیکر کو دے  دیئے ہیں،سپیکر قومی اسمبلی ایوان میں کمیٹی کا باضابطہ اعلان کریں گے،کمیٹی اپنے پہلے اجلاس میں ٹی او آرز طے کرے گی،حکومت اور اپوزیشن سینیٹرز کے نام سپیکر کو بھجوائے گی جس کے بعد کمیٹی کے قیام کا باضابطہ اعلان کیا جائے گا اور نوٹیفکشن کے بعد کمیٹی اپنا کام شروع کرے گی۔کمیٹی 24ارکان پر مشتمل ہو گی جو انتخابات میں مبینہ دھاندلی سے متعلق تحقیقات کرے گی اور تحقیقات کے لیے جس بھی ادارے سے ریکارڈ مطلوب ہو گا، وہ حاصل کیا جا سکے گا اور کمیٹی جسے چاہے گی، اس کو طلب کر سکے گی۔پیپلزپارٹی کی جانب سے جن ارکان کے نام دیئے گئے ان میں خورشید شاہ، راجہ پرویز اشریف اور نوید قمر شامل ہیں جبکہ مسلم لیگ (ن)نے احسن اقبال، رانا ثناء اللہ ، رانا تنویر اور مرتضی جاوید عباسی کو کمیٹی میں نامزد کیا ہے،جے یو آئی کے مولانا عبدالواسع  اور سردار اختر مینگل بھی اپوزیشن کی جانب سے کمیٹی کا حصہ ہوں گے  ۔

واضح رہے کہ 10 روز قبل  18 ستمبر کو وزیر خارجہ  شاہ محمود قریشی نے اپوزیشن کی تسلی کے لئے عام انتخابات میں مبینہ دھاندلی کی تحقیقات کے لیے پارلیمانی کمیٹی بنانے کی تحریک قومی اسمبلی میں پیش کی گئی تھی جسے متفقہ طور پر منطور کر لیا گیا تھا  جبکہ گذشتہ روز سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کی سربراہی میں اسی حوالے سے ایک اجلاس بھی ہوا تھا جس میں اپوزیشن جماعتوں نے مجوزہ کمیٹی کے لئے اپنے اراکین کے نام بھی دے دیئے تھے ۔

مزید : اہم خبریں /قومی