کچھ لائے نہ تھے کہ کھو گئے ہم | خواجہ میر درد |

کچھ لائے نہ تھے کہ کھو گئے ہم | خواجہ میر درد |
کچھ لائے نہ تھے کہ کھو گئے ہم | خواجہ میر درد |

  

کچھ لائے نہ تھے کہ کھو گئے ہم

تھے آپ ہی ایک سو گئے ہم

جوں آئنہ جس پہ یاں نظر کی

ساتھ اپنے دوچار ہوگئے ہم

ماتم کدہ دہر میں جوں ابر

اپنے تئیں آپ رو گئے ہم

ہستی نے تو ٹک جگا دیا تھا

پھر کھلتے ہی آنکھ سو گئے ہم

یاروں  ہی سے درد ہے یہ چرچا

پھر کوئی نہیں ہے ، جو  گئے ہم

شاعر: خواجہ میر درد

 (دیوانِ درد :سال اشاعت،2011)

Kuchh   Na   Laaey   Thay   Keh   Kho   Gaey   Ham

Thay    Aap    Hi    Aik    Soo  Gaey   Ham

Joon   Aaina    Jiss    Pe    Yaan    Nazar   Ki

Saath    Apnay    Dochaar    Ho   Gaey   Ham

Maatam  Kada-e-Jahaan    Men    Joon    Aor

Apnay  Taeen    Aap    Ro    Gaey    Ham

Hasti    Nay    To    Tuk    Jagaa    Diya   Tha

Phir    Khultay    Hi    Aankh    So    Gaey  Ham

Yaron   Hi   Say    DARD    Hay   Yeh   Charcha

Phir    Koi    Nahen   Hay    Jo    Gaey  Gaey   Ham

Poet: Khawaja    Meer    Dard

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -