دل مرا باغِ دل کشا ہے مجھے | خواجہ میر درد |

دل مرا باغِ دل کشا ہے مجھے | خواجہ میر درد |
دل مرا باغِ دل کشا ہے مجھے | خواجہ میر درد |

  

دل مرا باغِ دل کشا ہے مجھے

دیدہ ، جامِ جہاں نما ہے مجھے

چشمِ نقشِ قدم ہوں میں بے کس

خاک آنکھوں میں توتیا ہے مجھے

مجھ سے ہر چند تو مکدر ہے

تجھ سے , پر  , اور ہی صفا ہے مجھے

کہیں خاموش ہوکہ مثلِ شمع

اے زباں! تجھ سے ہی گلہ ہے مجھے

درد تیرے بھلے کو کہتاہوں

یہ نصیحت سے مدعا ہے مجھے

شاعر: خواجہ میردرد

 (دیوانِ درد :سال اشاعت،2011)

Dil   Mira   Baagh-e-Dil   Kushaa    Hay   Mujhay

Deeda  ,  Jaam-e-Jahaan   Numa    Hay   Mujhay

Chashm-e-Naqsh-e-Qadam    Hun     Main   Bekass

Khaak    Aankhon   Men    Totiyaa    Hay   Mujhay

Mujh   Say   Harchand   To    Mukaddar    Hay

Tujh   Say   ,   Par   ,    Aor     Hi   Safaa    Hay   Mujhay

Kahen    Khamosh     Ho    Keh    Misl-e-Shama

Ay    Zubaan   Tujh    Say    Hi    Gila    Hay   Mujhay

DARD    Teray    Bhalay    Ko   Kehta   Hun

Yeh   Naseehat   Say   Mudaa   Hay   Mujhay

Poet: Khawaja   Haidar   Ali    Aatish

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -