جگر کو تھام کے میں بزمِ یار سے اٹھا| داغ دہلوی |

جگر کو تھام کے میں بزمِ یار سے اٹھا| داغ دہلوی |
جگر کو تھام کے میں بزمِ یار سے اٹھا| داغ دہلوی |

  

جگر کو تھام کے میں بزمِ یار سے اٹھا

ہر اک قرار سے بیٹھا ، قرار سے اٹھا

ہمارے دل نے وہ تنہا اُٹھا لیا ظالم

ترا ستم ، جو نہ اک روزگار سے اٹھا

ہوا نہ پھر کہیں روشن ، یہ رشک تو دیکھو

کوئی چراغ جو میرے مزار سے اٹھا

 ہوا ہے خون کی چھینٹوں سے پیرہنِ گلزار

ترے شہید کا لاشہ بہار سے اٹھا

گلہ رقیب کا سن کر جھکی رہی آنکھیں

حجاب کیا نگہِ شرمسار سے اٹھا

ترس رہے تھے شرابی کہ انگلیاں اٹھیں

وہ ابر رحمتِ پروردگار سے اٹھا

کسی نے پاۓ حنائی جو ناز سے رکھا

بھڑک کے شعلہ ہمارے مزار سے اٹھا

رہی وہ حسرتِ دنیا کہ صبحِ محشر بھی

میں اپنے ہاتھوں کو ملتا مزار سے اٹھا

وہ فتنہ ، فتنہ ہے وہ حشر ، حشر ہے یاربّ !

جو بزمِ یار سے ، جو کوۓ یار سے اٹھا

تم اپنے ہاتھ سے دو پھول غیر کو چن کر

یہ داغ کب دلِ امیدوار سے اٹھا

شاعر: داغ دہلوی

 (آفتابِ داغ :سال اشاعت،1923)

Jigar    Ko   Thaam   K    Main    Bazm-e-Yaar   Say   Utha

Har   Ik   Qaraar   Say   Betha   Qaraar   Say   Utha

Hamaaray   Dil    Nay    Wo    Tanha   Uthaa   Liya   Zaalim

Tira   Sitam   Jo   Ik    Rozgaar   Say   Utha

Hua   Na   Phir    Kahen    Raoshan   Yeh    Rshk To Dekho

Koi   Charaagh   Jo    Meray   Mazaar    Say   Utha

Hua   Hay   Khoon   K   Chheenton   Say   Pairhan-e-Gulzaar

Tiray   Shaheed    Ka   Laasha   Bahaar   Say   Utha

Gila   Raqeeb   Ka   Sun   Kar   Jhuki    Rahi   Aankhen

Hijaab   Kaisa    Aankh    Sharmsaar   Say   Utha

Tarass   Rahay   Thay    Sharaabi   Keh    Ungliyaan   Uthen

Wo    Abr    Rehmat -e-Pawardgaar    Say   Utha

Kisi    Nay    Paa-e-Hinaai    Jo   Naaz    Say   Rakha

Bharrak   K    Shola    Hamaaray    Mazaar    Say   Utha

Rahi    Wo   Hasrat-e- Dunya    Keh    Subh-e-Mehshar   Bhi

Main   Apnay   Hathon   Ko   Malta   Mazaar   Say   Utha

Wo   Fitna    Fitna   Hay , Wo    Hashar    Hashr    Hay   Ya   RAB

Jo    Bazm-e-Yaar   Say   Jo    Koo-e-Yaar    Say   Utha

Tum   Apnay   Haath    Say    Do    Phool    Ghair   Ko    Chun   Kar

Yeh    DAGH    Kab    Dil-e-Umeed    Waar   Say   Utha

Poet: Dagh    Dehlvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -