دل مبتلائے لذت آزار ہی رہا  | داغ دہلوی |

دل مبتلائے لذت آزار ہی رہا  | داغ دہلوی |
 دل مبتلائے لذت آزار ہی رہا  | داغ دہلوی |

  

دل مبتلائے لذت آزار ہی رہا 

مرنا فراقِ یار میں دشوار ہی رہا 

احسان عفو   جرم سے وہ شرمسار ہوں 

بخشا گیا میں تو بھی گنہ گار ہی رہا 

ہوتی ہیں ہر طرح سے مری پاسداریاں 

دشمن کے پاس بھی وہ مرا یار ہی رہا 

دن پہلوؤں سے ٹال دیا کچھ نہ کہہ سکے 

ہر چند ان کو وصل کا انکار ہی رہا 

دیکھیں ہزار رشکِ مسیحا کی صورتیں 

اچھا رہا جو عشق کا بیمار ہی رہا 

لذت وفا میں ہے نہ کسی کی جفا میں ہے 

دل دار ہی رہا نہ دل آزار ہی رہا 

جلوہ کے بعد وصل کی خواہش ضرور تھی 

وہ کیا رہا جو عاشقِ دیدار ہی رہا 

کہتے ہیں جل کے غیر محبت سے داغؔ کی 

معشوق اس کے پاس وفادار ہی رہا 

شاعر: داغ دہلوی

 (آفتابِ داغ :سال اشاعت،1923)

Dil   Mubtala-e-Lazzat    Azaar   Hi   Raha

Marna   Firaaq-e-Yaar   Men    Dushwaar   Hi   Raha

Ehsaan   Afw    Jurm      Say   Wo    Sharmsaar   Hun

Bakhsa   Gaya   Main   To    Bhi    Gunehgaar    Hi   Raha

Hoti   Hen   Har   Tarah   Say   Meri    Paasdariyaan

Dushman   K    Paas   Bhi   Wo    Mira   Yaar   Hi   Raha

Din   Paehluon    Say   Taal   Diya    Kuchh  Na   Keh   Sakay

Harchand   Un    Ko   Wasl   Ka    Iqraar   Hi   Raha

Dekhen    Hazaar    Rashk-e-Maseeha   Ki   Soorten

Acha   Raha   Jo   Eshq   Ka    Bemaar   Hi   Raha

Lazzat   Wafa   Men   Hay   Na    Kisi   Ki   Jafaa   Men   Hay

Dildaar   Hi   Raha   Na   Dil   Aazaar   Hi   Raha

Jalway   K   Baad   Wasl   Ki    Khaahish    Zaroor   Thi

Wo   Kaya    Raha     Jo    Ashiq -e-Dedaar   Hi   Raha

Kehtay    Hen    Jal    K    Ghair    Muhabbat    Say   DAGH  Ki

Mashooq    Uss   K    Paas   Wafa   Daar    Hi   Raha

Poet: Dagh   Dehlvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -