محبت میں آرام سب چاہتے ہیں | داغ دہلوی |

محبت میں آرام سب چاہتے ہیں | داغ دہلوی |
محبت میں آرام سب چاہتے ہیں | داغ دہلوی |

  

محبت میں آرام سب چاہتے ہیں 

مگر حضرتِ داغؔ کب چاہتے ہیں 

خطا کیا ہے ان کی جو اس بت کو چاہا 

خدا چاہتا ہے تو سب چاہتے ہیں 

مگر عالمِ یاس میں تنگ آ کر 

یہ سامانِ آفت عجب چاہتے ہیں 

اجل کی دعا ہر گھڑی مانگتے ہیں 

غم و درد و رنج و تعب چاہتے ہیں 

نہ تفریح و آسائش دل کی خواہش 

نہ سامان عیش و طرب چاہتے ہیں 

قیامت بپا ہو نزولِ بلا ہو 

یہی آج کل روز و شب چاہتے ہیں 

نہ جنت کی حسرت نہ حوروں کی پروا 

نہ کوئی خوشی کا سبب چاہتے ہیں 

نرالی تمنا ہے اہلِ کرم سے 

ستم چاہتے ہیں غضب چاہتے ہیں 

نہ ہو کوئی آگاہِ رازِ نہاں سے 

خموشی کو یہ مہرِ لب چاہتے ہیں 

خدا اُن کی چاہت سے محفوظ رکھے 

یہ آزار بھی منتخب چاہتے ہیں 

غمِ ہجر سے داغؔ مجبور ہو کر 

کبھی جو نہ چاہا وہ اب چاہتے ہیں 

شاعر: داغ دہلوی

 (آفتابِ داغ :سال اشاعت،1923)

Muhabbat    Men   Aaraam   Sab   Chaahtay   Hen

Magar   Hazrat-e-DAGH    Kab   Chaahtay   Hen

Khata   Kaya   Hay   Un   Ki   Jo   Iss   But   Ko   Chaaha

Khuda   Chaahta   Hay   To   sab   Chaahtay   Hen

Magar   Aalam-e- Yaas   Men   Tang   Aa   Kar

Yeh   Saamaan -e-Aafat     Ajab   Chaahtay   Hen

Ajal   Ki   Har   Gharri   Dua   Maangtay   Rahay

Gham-o-Dard-o-Ranj-o-Atab   Chaahtay   Hen

Na   Tafreeh -o-Aasaaish -e-Dil   Ki   Khaahish

Na   Samaan-e-Aish-o-Tarab   Chaahtay   Hen

Qayaamat   Bapaa   Ho   Nazool-e- Balaa   Ho 

Yahi   Aaj   Kall   Roz-o-Shab   Chaahtay   Hen

Na   Jannat   Ki    Hasrat   Na   Hooron   Ki   Parwaah

Na   Koi    Khushi   Ka   Sabab   Chaahtay   Hen

Niraali   Tamanna   Hay   Ehl-e-Karam   Say

Sitam   Chaahtay   Hen    Ghazab   Chaahtay   Hen

Na   Ho   Koi   Aagaah -e- Raaz-e-Nihaan  Say

Khamoshi   Ko   Yeh   Mehr -e- Lab   Chaahtay   Hen

Khuda   Un   Ki    Chaahat   Say   Mehfooz   Rakhay

Yeh   Azaar   Bhi   Muntakhab   Chaahtay   Hen

Gham-e-Hijr   Say   DAGH  Majboor   Ho   Kar

Kabhi   Jo   Na   Chaaha   Wo    Ab   Chaahtay   Hen

Poet: Dagh   Dehlvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -