ایک بجھاؤ ایک جلاؤ خواب کا کیا ہے | دانیال طریر|

ایک بجھاؤ ایک جلاؤ خواب کا کیا ہے | دانیال طریر|
ایک بجھاؤ ایک جلاؤ خواب کا کیا ہے | دانیال طریر|

  

ایک بجھاؤ ایک جلاؤ خواب کا کیا ہے 

آنکھوں میں رکھ کر سو جاؤ خواب کا کیا ہے 

 شیلف پہ الٹا کر کے رکھ دو اور بسرا دو 

گل دانوں میں پھول سجاؤ خواب کا کیا ہے 

خواب کا کیا ہے رات کے نقش و نگار بناؤ 

رات کے نقش و نگار بناؤ خواب کا کیا ہے 

نیند ملی ہے گڑ سے میٹھی شہد سے شیریں 

گاؤ   ناچو   ناچو   گاؤ خواب کا کیا ہے 

ایک کباڑی گلیوں گلیوں آواز لگائے 

راکھ خریدو آگ کے بھاؤ خواب کا کیا ہے 

شاعر: دانیال طریر

 (شعری مجموعہ"لایعنیت کا انکار" :سال اشاعت،2012)

Aik   Bujhaao   Aik   Jalaao   Khaab   Ka   Kaya   Hay

Aankhon    Men    Rakh   Kar    So    Jaao   Khaab   Ka   Kaya   Hay

Shelf    Pe   Ulta   Kar    Rakh    Do    Aor     Bisraa   Do

Gul    Daanon    Men    Phool    Sajaao   Khaab   Ka   Kaya   Hay

Khaab   Ka    Kaya   Hay   Raat   K   Naqsh-o-Nigaar    Banaao

Raat   K    Naqsh-o-Nigaar   Banaao    Khaab   Ka   Kaya   Hay

Neend   Mili    Hay   Gurr   Say   Meethi    Shehd    Say   Shereen

Gaao  ,   Naacho  ,   Naacho   Gaao  ,  Khaab   Ka   Kaya   Hay

Aik   Kabaarri    Galion    Galion   Waaj   Lagaaey

Raakh   Khareedo   Aag   K    Bhaao    Khaab   Ka   Kaya   Hay

Poet: Daniyal   Tareer

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -