بلا جواز نہیں ہے فلک سے جنگ مری  | دانیال طریر|

بلا جواز نہیں ہے فلک سے جنگ مری  | دانیال طریر|
بلا جواز نہیں ہے فلک سے جنگ مری  | دانیال طریر|

  

بلا جواز نہیں ہے فلک سے جنگ مری 

اٹک گئی ہے ستارے میں اک پتنگ مری 

پھر ایک روز مرے پاس آ     کر اس نے کہا 

یہ اوڑھنی ذرا قوس قزح سے رنگ مری 

میں چیختے ہوئے صحرا میں دور تک بھاگا 

نہ جانے ریت کہاں لے گئی امنگ مری 

فنا کی سرخ دوپہروں میں رقص جاری تھا 

رگیں نچوڑ رہے تھے رباب و چنگ مری 

لہو کی بوند گری روشنی کا پھول کھلا 

پھر اس کے بعد کوئی اور تھی ترنگ مری 

شاعر: دانیال طریر

 (شعری مجموعہ"لایعنیت کا انکار" :سال اشاعت،2012)

Bila    Jawaaz   Nahen   Hay   Falak   Say   Jang   Miri

Attak   Gai   Hay    Sitaray   Men    Ik   Pitang   Miri

Phir   Aik    Roz    Miray    Paas   Aa   Kar   Us   Nay   Kaha

Yeh   Aorrhni   Zara   Qaos   Qazaah   Say   Rang   Miri

Main    Cheekhtay   Huay    Sehraa    Men    Door   Tak   Bhaaga

Na Jaanay Rait Kahan Lay Gai Umang Miri

Fanaa Ki Surkh Dopahron Men Raqs Jaari Tha

Ragen Nichorr Rahay Thay Rubaab-o-Chang Miri

Lahoo    Ki    Boond   Giri    Raoshni    Ka    Phool   Khila

Phir   Uss   K   Baad   Koi   Aor Thi   Umanng   Miri

Poet: Daniyal   Tareer

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -