تیز ہوا میں رکھتا میں خاموشی کو| دانیال طریر|

تیز ہوا میں رکھتا میں خاموشی کو| دانیال طریر|
تیز ہوا میں رکھتا میں خاموشی کو| دانیال طریر|

  

تیز ہوا میں رکھتا میں خاموشی کو

کاش صدا دے سکتا میں خاموشی کو

تیرے لہجے سے یا اپنی حیرت سے

کس بادل سے ڈھکتا میں خاموشی کو

بھید کھلا جب اس نے اپنے لب کھولے

سمجھ رہا تھا سکتہ میں خاموشی کو

ہم ہوتے اور کُہرا ہوتا ہر جانب

تو آواز کو تکتا میں خاموشی کو

کیسی لایعنی خواہش ہے یہ خواہش

موت سے پہلے چکھتا میں خاموشی کو

الگ الگ آوازوں کی اس دُنیا میں

ڈھونڈ رہا ہوں یکتا میں خاموشی کو

شاعر: دانیال طریر

 (شعری مجموعہ"لایعنیت کا انکار" :سال اشاعت،2012)

Taiz     Hawaa   Men    Rakhta   Main     Khaamoshi   Ko 

Kaash   Sadaa   Day   Sakta   Main   Khaamoshi   Ko

 Teray    Lehjay    Say  Ya   Apni    Hairat    Say

Kiss    Baadal    Say    Dhakta    Main   Khaamoshi   Ko

Bhaid    Khula    Jab   Uss    Nay   Apnay    Lab   Kholay

Samajh    Raha    Tha    Sakta   Main     Khaamoshi   Ko

Ham    Hotay   Aor   Kohra   Hota    Har   Jaanib

Tu    Awaaz  Ko   Takta   Main   Khaamoshi   Ko

Kaisi    Laa   Yaani    Khaahish   Hay   Yeh   Khaahish

Maot   Say    Pehlay   Takta   Main    Khaamoshi   Ko

Alag   Alag   Aawaazon   Ki   Iss   Dunya    Men 

Dhoond   Raha   Hun   Yakta   Main   Khaamoshi   Ko

Poet: Daniyal   Tareer

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -