آٹھواں سہرا | دلاور فگار|

آٹھواں سہرا | دلاور فگار|

  

آٹھواں سہرا

مرے بنے کومبارک ہو آٹھواں سہرا

سنا رہا ہے جوانی کی داستاں سہرا

بنے کی عمر ہی کیا ہے فقط اَٹھاسی سال

سفید دھوپ کی شدت سے ہو گئے ہیں بال

نہ اس کا کون ہے وائٹ نہ اِس کا دل کالا

مرا بنا ہے بڑھاپے میں کیسا   ہریالا

خوشی سے کیوں نہ کھلیں آج پھول سہرے کے

کہ اک بزرگ ہیں اپریل فول سہرے کے

مرے بنے کا تو ہے مشغلہ یہی ورنہ

کوئی مذاق ہے سات آٹھ شادیاں کرنا

حسد سے آج یہ کہتے ہیں شاہ کے پوتے

کہ دادا جان کے سہرے میں کاش ہم ہوتے

گلہ پدر سے یہ ہے ایک شہزادے کو

کہ میرا باپ نہ سمجھا مرے ارادے کو

عجیب شان سے سسرال جا رہی ہے برات

غمِ حیات سے بڑھ کر غمِ شریکِ حیات

برات لے کے چلا ہے یہ ہنس بے چارہ

سڑک پہ بھونک رہے ہیں سگانِ آوارہ

رُخِ جمیل کی سہرے میں اب یہ ہے صورت 

کیا ہو جیسے قلنبیق کو گلِ حکمت

مرے بنے کو  ملا ہے عجیب جہیز

بغیر آرام کی کرسی، بغیر ٹانگ کی میز

ڈنر دیاہے ولیمہ میں کیا مسلمانی

پلاؤ  ، قورمہ، کندم کباب ، بریانی

جیہز میں یہ جو اک گرم شیروانی ہے

مرا خیال ہے اس کا بھی عقدِ ثانی ہے

شاعر: دلاور فگار

 (شعری مجموعہ"خدا جھوٹ نہ  بلوائے" :سال اشاعت،1989)

Aathwaan     Sehra

Miray   Bannay   Ko   Mubarak   Ho   Aathwaan   Sehra

Suna   Raha   Hay   Jawaani   Ki   Daastaan   Sehra

Bannay   Ki   Umr   Hi   Kaya   Hay   Faqat   Athaasi   Saal

Sufaid   Dhoop   Ki   Shiddat   Say   Ho   Gaey   Hen   Baal

Na   Iss   Ka   Khoon   Hay   Wahite   Na   Iss   Ka   Dil   Kaala

Mira   Banna   Hay   Burrhaapay   Men    Kaisa   Haryala

Khushi   Say    Kiun   Na   Khilen   Aaj   Phool   Sehray   K

Keh   Ik   Bazurg   Hen   April    Fool   Sehray   K

Miray   Bannay   Ka   To   Hay    Mashgala   Yahi   Warna

Koi   Mazaaq   Hay   Saat   Aath    Shadiyaan   Karna

Hasad   Say   Aaj   Kehtay   Hen   Shah   K   Potay

Keh   Dada   Jaan   K  Sehray   Men    Kaash   Ham   Hotay

Gila   Pidar   Say   Yeh   Hay   Aik    Shahzaaday   Ko 

Keh   Mira   Baap   Na   Samjha   Miray    Iraaday  Ko

Ajeeb   Shaan   Say   Susraal   Ja   Rahi   Hay   Baraat

Gaham-e-Hayaat   Say   Barrh    Kar    Gham-e-Shareek-e-Hayaat

Baraat   Lay   K    Chala     Hay   Yeh    Hans   Bechaara

Sarrak    Pe   Bhaonk    Rahay    Hen   Sagaan-e-Awaara

Rukh-e-Jameel    Ki   Sehray   Men   Ab   Yeh   Soorat   Hay

Kaya   Ho    Jaisay   Qalnbeeq    Ko   Gul-e-Hikmat

Miray    Bannay    Ko   Mila    Hay   Barra   Ajeeb   Jahaiz

Baghair   Araam   Ki   Kursi  ,   Baghair   Taang   Ki     Maiz

Dinar   Diya   Hay   Waleema   Men   Kaya   Musalmaani

Pulaao  ,   Qorma  ,   Kandam    Kabaab  ,   Biryaani

Jahaiz    Men   Yeh    Jo   Ik    Garm   Shaiwaani   Hay

Mira    Khayaal   Hay   Uss    Ka    Bhi   Aqd-e-Saani    Hay

Poet: Dilawar    Figar

مزید :

شاعری -مزاحیہ شاعری -