اہرمن ہے نہ خدا ہے مرا دل | رئیس امروہوی |

اہرمن ہے نہ خدا ہے مرا دل | رئیس امروہوی |
اہرمن ہے نہ خدا ہے مرا دل | رئیس امروہوی |

  

اہرمن ہے نہ خدا ہے مرا دل 

حجرۂ ہفت بلا ہے مرا دل 

مہبط روح ازل میرا دماغ 

اور آسیب زدہ ہے مرا دل 

سر جھکا کر مرے سینے سے سنو 

کتنی صدیوں کی صدا ہے مرا دل 

اجنبی زاد ہوں اس شہر میں میں 

اجنبی مجھ سے سوا ہے مرا دل 

آؤ قصدِسفر نجد کریں 

راہ ہے راہنما ہے مرا دل 

چند بے نام و نشاں قبروں کا 

میں عزا دار ہوں یا ہے مرا دل 

نہ تقاضا ہے کسی سے نہ طلب 

مدعا ہے نہ دعا ہے مرا دل 

راکھ بن بن کے اڑی ہے مری روح 

خون ہو ہو کے بہا ہے مرا دل 

پہلے میں دل پہ خفا ہوتا تھا 

اور اب مجھ سے خفا ہے مرا دل 

شاعر: رئیس امروہوی 

(شعری مجموعہ"حکایاتِ نے":سالِ اشاعت 1989)

Ahrman   Hay   Na   Khuda   Hay    Mira     Dil

Aor   Asaib   Zadaa   Hay    Mira     Dil

Sar   Jhuka   Kar   Miray    Seenay   Say   Suno

Kitni   Sadiyon   Ki   Sadaa   Hay    Mira     Dil

Ajnabi   Jaad   Hun   Iss   Shehr   Men

Ajnabi   Mujh   Say   Siwaa   Hay    Mira     Dil

Aao   Qasad-e-Safar-e-Najd   Karen

Raah   Hay    Raahnumaa   Hay    Mira     Dil

Chand   Be   Naam -o-Nishaan   Qabron   Ka 

Main   Azadaar   Hun   Yaa    Hay    Mira     Dil

Na   Taqaaza   Hay   Kisi   Say   Na  Talab

Mudaa   Hay   Na    Dua   Hay    Mira     Dil

Raakh   Ban   Ban   K   Urri   Hay   Miri   Rooh

Khoon   Ho   Ho   K   Bahaa   Hay    Mira     Dil

Pehlay    Main   Dil    Pe   Khafaa   Rehta   Tha

Aor   Ab   Mujh   Say    Khafaa   Hay    Mira     Dil

Poet: Rais Amrohvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -