’مرشد آئے تھے، سب کو بتانا مرشد آئے تھے‘ جیل بھی عثمان مرزا کے تیور نہ بدل سکی

’مرشد آئے تھے، سب کو بتانا مرشد آئے تھے‘ جیل بھی عثمان مرزا کے تیور نہ بدل ...
’مرشد آئے تھے، سب کو بتانا مرشد آئے تھے‘ جیل بھی عثمان مرزا کے تیور نہ بدل سکی

  

اسلام آباد (ویب ڈیسک) نوجوان جوڑے کو ہراساں کرنے کے کیس کے مرکزی ملزم عثمان مرزا کے جیل کی ہوا کھانے کے بعد بھی تیور نہ بدلے ، عدالت آمد پر میڈیا والوں کو دیکھ کرکہا کہ ’مرشد آئے تھے، سب کو بتانا مرشد آئے تھے۔‘

جیونیوز کے مطابق عدالت میں پیشی کے لیے آنے والے عثمان مرزا کا مزاج  آج  بھی اوباشوں والا ہی تھا۔ 

خیال رہے کہ اسلام آباد کی عدالت میں شہر کے علاقے ای الیون میں جوڑے کو ہراساں اور تشدد کرنے کے کیس کی سماعت ہوئی۔کیس میں مرکزی ملزم عثمان مرزا سمیت 7 ملزمان پر فرد جرم عائد کر دی گئی ہے جب کہ گواہوں کو آئندہ سماعت پر طلب کیا گیا ہے۔عدالت کی جانب سے تمام ملزمان کو چارج شیٹ پیش کردی گئی اور آئندہ سماعت پر وکالت نامہ ساتھ لانے کی ہدایت کی۔

عدالت نے گواہان کے بیانات قلمبند کرنے کیلئے گواہوں کو نوٹسز جاری کر دیے اور کیس کی سماعت 12 اکتوبر تک ملتوی کردی گئی۔

مزید :

علاقائی -اسلام آباد -