ریاست پارلیمان کی جمہوریت کو تسلیم کرنے کو تیار نہیں ، رضا ربانی پھٹ پڑے

ریاست پارلیمان کی جمہوریت کو تسلیم کرنے کو تیار نہیں ، رضا ربانی پھٹ پڑے
ریاست پارلیمان کی جمہوریت کو تسلیم کرنے کو تیار نہیں ، رضا ربانی پھٹ پڑے

  

 اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) پیپلز پارٹی کے مرکزی رہنما سینیٹر رضا ربانی نے کہا ہے کہ ریاست پارلیمان کی جمہوریت کو تسلیم کرنے کو تیار نہیں ہے، اداروں کو جان بوجھ کر ختم کیا جا رہا ہے، جدوجہد کی سمت واضع ہونی چاہیے، ہمارا سامنا کن قوتوں کے ساتھ ہے؟ کہا جارہا ہے کہ الیکٹرانک مشین کا روس میں کامیاب تجربہ رہا ہے، روس کمیونسٹ پارٹی دھاندلی کے خلاف سراپا احتجاج ہے، کیا ہم یہی تجربہ پاکستان میں کرنا چاہتے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق سینیٹر رضا ربانی نے کہا ہے کہ ہم کس آئین کی بات کر رہے ہیں؟کیا ہم 1973ء کے آئین کی بات کر رہے ہیں، مجھے وہ آئین نافذ عمل نظر نہیں آ رہا، ہم کن قوانین کی بات کرتے ہیں?اس ریاست میں صرف ایک قانون ہےاور وہ ریاست کاقانون ہے۔انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ میں درخواست دی گئی کہ جمہوری حکومت کو ختم کیا گیا، آج 1973ء کا آئین حکمرانی نہیں کر رہا، آفیشل سیکرٹ ایکٹ کی حکمرانی ہے، آج رولنگ ایلیٹ نے پاکستان کی عوام کو اپنے مقاصد کے لیے استعمال کیا، سول ملڑی ریلیشن شپ ہماری خام خیالی ہے، مجھے افسوس ہے کہ آج یہ دن دیکھ رہا ہوں۔

 سینیٹررضاربانی نےکہا کہ بنیادی اصلاحات کے لیے تمام فریقین کو ساتھ لے چلنا پڑتا ہے، پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے کر لیں لیکن فریقین ساتھ نہ ہوں تو اُس قانون سازی کی کیا اہمیت ہوگی؟۔

مزید :

علاقائی -اسلام آباد -