تعلیم کے بغیر ملک و قوم کی ترقی کا تصور تک ممکن نہیں:تحصیل ناظم مٹہ

تعلیم کے بغیر ملک و قوم کی ترقی کا تصور تک ممکن نہیں:تحصیل ناظم مٹہ

  

مٹہ (نمائندہ پاکستان)تحصیل ناظم مٹہ عبداللہ خان اور ڈی ای او سوات محمد امین نے کہا ہے کہ تعلیم کی بغیر ملک وقوم کی ترقی ممکن نہیں اسلئے عوام اور خصوصاًوالدین صوبائی حکومت کے تعلیمی نظام کی بہتر بنانے اور ملک وقوم کو ایک تعلیم یافتہ قوم دینے میں اپنا کلیدی کردار ادا کریں صوبائی حکومت نے تعلیمی نظام کو بہتر بنانے اور سکولوں کو تمام سہولتیں دینے کیلئے تاریخی عملی اقدامات کی ہے جو اس سے پہلے کسی نے نہیں کی ہے ہزاروں کی تعداد میں اساتذہ کرام کو بھر تی کرکے صوبائی حکومت نے بچوں کی وقت ضائع ہونے سے بچالیا ہے اب تمام سکولوں میں بہترین سہولیات دینے کیلئے بھی صوبائی حکومت ایک خطیر رقم خرچ کررہے ہیں انہوں نے کہا کہ نرسری سے کلاس 10thتک قرانی پاک کی تعلیم اور ترجمعے کو لازمی قرار دیکر صوبائی حکومت نے ایک کارنامہ سرانجام دیا ہے جو خیبر پختونخوا کی عوام کا ایک دیرینہ مطالبہ تھا ان خیالات کااظہار انہوں نے گذشتہ روز گورنمنٹ ہائر سیکنڈری باماخیلہ میں یوم والدین کے سالانہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا اس موقع پر پرنسپل عنایت الرحمان حضرت بلال حمید اللہ عالم زیب قاری احمان یلی اوردیگر نے بھی خطاب کی جبکہ تقریب میں سکول کی بچوں سٹاف معززین علاقہ والدین دیگر سرکاری اور نجی سکولوں کے اساتذہ اور عام لوگوں نے بھی بڑی تعداد میں شرکت کی تقریب میں سکول کی بچوں نے بھی شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کیا اور شرکاء سے خوب داد وصول کی انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت نے تعلیمی نظام کو بہتر بنانے کیلئے پہلی بار تاریخی اقدامات اٹھا کر اس وقت تعلمی نظام میں بہت تبدیلی ائی ہے انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت نے دوکمروں سکولوں کی بجائے چھ کمروں پر مشتمل سکولوں کو بنانے کا ایک تاریخی فیصلہ کرکے اس سے تعلیم کی معیار کو بہتر بنانے میں اہم سنگ میل ثابت ہوگی انہوں نے کہا کہ عوام اساتذہ اور خاص کر والدین بچوں کو تعلیم دینے میں صوبائی حکومت کا ساتھ دیکر ملک اور صوبے کو ایک تعلیمی یافتہ قوم دینے کی مہم کو کامیاب بنائے اور ملک میں ایک خوشحال اور پر امن معاشرے کی قیام کو ممکن بنائے اس موقع پر تحصیل ناظم عبداللہ خان نے سکول کیلئے ایک واٹر کولر دینے کا بھی اعلان کیا اخر میں مہمانوں نے سکول کی طلباء اور دیگر پر انعامات اور سر ٹیفکیٹ اور شیلڈ تقسیم کی

مزید :

پشاورصفحہ آخر -