تجزیہ کار حبیب اکرم نے مدارس کے طلبہ کے حوالے سے حیران کن دعویٰ کردیا

تجزیہ کار حبیب اکرم نے مدارس کے طلبہ کے حوالے سے حیران کن دعویٰ کردیا
تجزیہ کار حبیب اکرم نے مدارس کے طلبہ کے حوالے سے حیران کن دعویٰ کردیا

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) تجزیہ کار حبیب اکرم نے کہاہے کہ درس نظامی کومکمل کرکے ڈاکٹر اور انجینئر نہیں بن سکتے ، یہ مدارس ضیاءالحق کے دور میں بنے ، یہ جہاد کی پالیسی کے تخت بنے تھے جواس وقت ضرورت تھی ،جب چالیس قسم کے نصاب کو حکومتی سرپرستی میں پروموٹ کیا جارہاہے تو پھر وفاق المدارس نے آپ کا کیا بگاڑا ہے ؟

دنیا نیوز کے پروگرام ”نقطہ نظر “میں گفتگو کرتے ہوئے حبیب اکرم نے کہا کہ مدارس کو سمجھنے والے لوگوں نے بہت پہلے اس حوالے سے آواز بلند کی تھی کہ ان کو وزارت صنعت سے ہٹائیں ، ہم نے ہمیشہ کہا ہے کہ مدارس کو وزارت تعلیم کے ماتحت کردیا جائے ، مسلم لیگ ن کی حکومت نے فیصلہ کیا تھا کہ ان مدارس کو وزارت داخلہ کے ماتحت کردیا جائے ۔ ان کا کہنا تھا کہ اگر اب مدارس کو وزارت تعلیم کے ماتحت کرنے کا فیصلہ کرلیا گیا ہے تو پھر یہ بہت پرانا مطالبہ ہے جس کومان لیا گیاہے۔

ان کا کہنا تھا کہ درس نظامی کومکمل کرکے ڈاکٹرز اور انجینئرز نہیں بن سکتے ، یہ مدارس ضیاءالحق کے دور میں بنے ، یہ جہاد کی پالیسی کے تخت بنے تھے جواس وقت ضرورت تھی ۔ انہوں نے کہا کہ جب چالیس قسم کے نصاب کو حکومتی سرپرستی میں پروموٹ کیا جارہاہے تو پھر وفاق المدارس نے آپ کا کیا بگاڑا ہے ؟اصلاحات سے کوئی نہیں روک رہاہے ، مسئلہ یہ ہے کہ گھوڑے کوگاڑی کے پیچھے باندھا جارہاہے ۔

مزید :

قومی -