تبدیلی سرکارنے محنت کشوں کو مشکل گھڑی میں بے آسراء چھوڑ دیا ہے، ایمل ولی

تبدیلی سرکارنے محنت کشوں کو مشکل گھڑی میں بے آسراء چھوڑ دیا ہے، ایمل ولی

  

پشاور(سٹی رپورٹر) اے این پی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان نے کہا کہ حکومت سعودی عرب اور دیگر خلیجی ممالک میں پھنسے ہوئے پختونوں اور ملک کے دیگر شہریوں کی واپسی کیلئے بلاوجہ تاخیری حربے ترک کرتے ہوئے اقدامات کریں،تبدیلی سرکار نے ان لاکھوں محنت کشوں کو مشکل کی اس گھڑی میں بے آسراء چھوڑ دیا ہے جو کہ ماہانہ ملکی زرمبادلہ میں اربوں ڈالرز کا اضافہ کرتے ہیں۔باچا خان مرکز پشاور سے جاری اپنے بیان میں صوبائی صدر اے این پی ایمل ولی خان نے کہا کہ لاک ڈاون کی وجہ سے باہر ممالک بلخصوص سعودی عرب اور دیگر خلیجی ممالک میں غریب محنت کش انتہائی سخت زندگی گزارنے پر مجبور ہیں،حکومت ان تمام محنت کشوں کی واپسی کیلئے ایمرجنسی فلائیٹس میں خاطر خواہ اضافہ کریں اور جلد از جلد ان کی واپسی کو یقینی بنائیں۔ ایمل ولی خان نے یہ بھی کہا کہ مشکل کی ا س گھڑی میں غریب محنت کشوں سے ڈبل اور ٹرپل ائیر لائن ٹکٹس کی بھی پرزور مذمت کرتے ہیں،حکومت مشکل کی ا س گھڑی میں اگر ان مسافروں کے ساتھ بھلائی نہیں کرسکتی تو اُن کی مجبوری سے غلط فائدہ بھی نہ اُٹھائیں۔ ایمل ولی خان نے مزید کہا کہ جن مسافروں کی اب ملک واپسی یقینی ہورہی ہے،ملک پہنچنے کے بعد قرنطینہ سنٹرز میں ان کیلئے ضروریات اور سہولیات کا خصوصی خیا ل رکھا جائے اور ان کیلئے ہر قسم کے انتظامات کو یقینی بنایا جائے۔ اے این پی کے صوبائی صدر نے کہا کہ مرکزی حکومت اس سخت اور مشکل وقت میں باہر ممالک میں ملکی سفارت خانے اور سفارتکاروں کو مکمل طور پر فعال کریں اور اُن پر نظر رکھیں،کیونکہ باہر دنیا سے ایسی خبریں آرہی ہے کہ باہر ممالک میں موجود پاکستانی سفارتخانے اپنے ہی لوگوں سے جانوروں جیسا سلوک کررہی ہے،یہ سلسلہ بند ہونا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ حکومت ہر محاذ پر ناکام ہوچکی ہے،جن اوورسیز پاکستانیوں نے کپتان کو سپورٹ کیا تھا آج سوشل میڈیا پر وہی پاکستانی کپتان اور اُس کی حکومت کا گالیاں دے رہی ہے،انہوں نے کہا کہ ایک غیر سنجیدہ حکومت عوام کی زندگی کے فیصلوں میں مصروف عمل ہے،جن سے خیر اور عوامی فلاح کی توقع ہی نہیں کی جاسکتی۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -