گلگت بلتستان باسیوں کے وہی حقوق جو پاکستا نی شہریوں کو حاصل ہیں: چیف جسٹس

گلگت بلتستان باسیوں کے وہی حقوق جو پاکستا نی شہریوں کو حاصل ہیں: چیف جسٹس

  

اسلام آباد (آئی این پی) چیف جسٹس نے گلگت بلتستان میں آئندہ انتخابات سے متعلق کیس میں ریمارکس دئیے کہ گلگت بلتستان کے شہریوں کو بھی وہی حقوق ملنے چاہیں جو پاکستانی شہریوں کو حاصل ہیں۔ تفصیلات کے مطابق گلگت بلتستان میں آئندہ انتخابات سے متعلق کیس کی سماعت چیف جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے سات رکنی لارجر بینچ نے کی۔اس موقع پر اٹارنی جنرل نے موقف اختیار کیا کہ گلگت بلتستان کی حکومت کی موجودہ مدت چوبیس جون کو ختم ہو رہی ہے۔ گلگت بلتستان آرڈر 2018 نگران سیٹ اپ کے حوالے سے خاموش ہے۔ لہذا عدالت اپنے 2019 کے حکم میں نگراں حکومت کے حوالے سے احکامات جاری کرے۔جس پر جسٹس اعجازالاحسن نے کہا کہ اس سے پہلے بھی گلگت بلتستان حکومت کی مدت ختم ہوتی رہی ہے ماضی میں گلگت بلتستان میں الیکشن کس قانون کے تحت ہوتے رہے۔ سپریم کورٹ کے 2019کے فیصلے کے بعد حکومت نے قانون سازی کیوں نہیں کی؟گلگت بلتستان کے لیے پہلے بھی صدارتی آرڈر جاری ہوتے رہے اب بھی کر لیں۔جس پر اٹارنی جنرل نے کہا کہ2015 کا الیکشن آرڈ ر 2009 کے تحت ہوا،نئی قانون سازی میں اگست 2019 میں ریجن میں ہوئی تبدیلوں کو بھی مدنظر رکھنا ہے۔اس موقع پر جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ گلگت بلتستان کی بڑی سیاسی اور عالمی اہمیت ہے،گلگت بلتستان کی گورننس آؤٹ اسٹینڈنگ ہونی چاہیے،حکومت نے جو کرنا ہے خود کرے، بعد ازاں عدالت نے ایڈوکیٹ جنرل گلگت بلتستان کو نوٹس جاری کرتے ہو ئے کیس کی سماعت جمعرات تک ملتوی کردی۔

چیف جسٹس

مزید :

پشاورصفحہ آخر -