مقبوضہ کشمیر میں جھڑپیں، پر امن مظاہرین پر فائرنگ، 2نوجوان شہید، 3لاکھ ہندوؤ ں کو کشمیر کے ڈومیسائل جاری

مقبوضہ کشمیر میں جھڑپیں، پر امن مظاہرین پر فائرنگ، 2نوجوان شہید، 3لاکھ ہندوؤ ...

  

نئی دہلی (مانیٹرنگ ڈیسک) مودی سرکارمسلم دشمنی کی پالیسی پر کاربند، مقبوضہ وادی کی آبادی کے تناسب کو بدلنے کا گھناؤنا اقدام سامنے آگیا، تین لاکھ غیر مقامی افراد کو کشمیر کے ڈومیسائل جاری کردئیے، ڈومیسائل حاصل کرنے والوں میں ایک بھی مسلمان شامل نہیں ہے۔ دوسری طرف قابض بھارتی فوج نے مزید دو کشمیریوں کو شہید کر دیاہے۔میڈیا کے مطابق انتہا پسند نظرئیے پرکاربند نریندر مودی سرکار نے مقبوضہ کشمیر میں ہندوؤں کو بسانے کے منصوبے پر عمل در آمد شروع کردیا ہے، نئی دہلی نے ایک متنازعہ قانون کا سہارا لے کر مقبوضہ کشمیر میں رہنے والے تین لاکھ غیر مقامی افراد کو مقبوضہ وادی کے ڈومیسائل جاری کردئیے ہیں۔ نئے ڈومیسائل حاصل کرنے والے تمام تین لاکھ افراد ہندو ہیں۔کشمیر میڈیا سروس کے مطابق آنے والے دنوں میں مزید 14 لاکھ افراد ڈومیسائل کے حامل ہو سکتے ہیں۔مودی سرکار کے فیصلے پر مقبوضہ کشمیر میں شدید بے چینی پائی جاتی ہے۔ حریت قیادت اور کشمیری عوام نے کہا ہے کہ فیصلے کی آڑ میں مقبوضہ کشمیر میں تعینات آٹھ لاکھ بھارتی فوجیوں اور 6 لاکھ دیگر غیر مقامی افراد کو بھی کشمیری شہریت دی جاسکتی ہے تاکہ مقبوضہ وادی میں آبادی کا تناسب تبدیل کیا جا سکے۔مقبوضہ کشمیر کو خصوصی حیثیت کی گارنٹی دینے والی آئینی شق دفعہ 370 اور دفعہ 35 اے کو گزشتہ سال مودی سرکار نے بیک جنبش قلم ختم کردیا تھا۔ ان آئینی شقوں کی رو سے مقبوضہ وادی میں کسی غیر کشمیری کو زمین خریدنے یا وہاں کی شہریت حاصل کرنے کی اجازت نہیں تھی۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق قابض بھارتی فوج نے ریاستی دہشتگردی کے تسلسل کو برقرار رکھتے ہوئے مزید دو کشمیریوں کو شہید کر دیا ہے۔دو نوجوانوں کو ضلع شوپیاں میں شہید کیا گیا، شوپیاں کے علاقے ملہورا میں آپریشن کے دوران قابض بھارتی فوجیوں نے کشمیریوں کے گھروں کو بھی نقصان پہنچایا، مظلوم کشمیریوں کے خلاف ظالم بھارتی فوجیوں کا آپریشن تاحال جاری ہے۔ گزشتہ روز بھی قابض بھارتی فوجیوں نے ضلع کلگام میں مزید تین نوجوانوں کو شہید کیا تھا۔ گزشتہ دو روز کے دوران قابض بھاتری فوجیوں نے 9 کے قریب نوجوانوں کو شہید کر دیا ہے۔بھارتی فوجیوں نے ضلع پلوامہ میں پرامن مظاہرین کے خلاف طاقت کا وحشیانہ استعمال کیا اوران پر گولیاں چلائیں اور آنسو کے گولے داغے جس کے نتیجے میں متعدد افرا د زخمی ہوگئے۔کشمیرمیڈیا سروس کے مطابق ضلع کے علاقوں گوسو، لارو اور کاکاپورہ میں لوگوں نے بھارتی فوجیوں کی طرف سے محاصروں اورتلاشی کارروائیوں کے خلاف احتجاجی مظاہرے کئے جس کے بعد قابض فوجیوں نے پرامن مظاہرین پر طاقت کا بے دریغ استعمال کیا۔بعد میں مظاہرین اور بھارتی فوجیوں کے درمیان جھڑپیں شروع ہوگئیں جو آخری اطلاعات آنے تک جاری تھیں۔

مقبوضہ کشمیر

مزید :

صفحہ اول -