ایئرپورٹ کے نزدیک رہنے والوں کو کینسر کا خطرہ زیادہ ہوسکتا ہے، تازہ تحقیق میں ماہرین کا حیران کن اور پریشان کن انکشاف

ایئرپورٹ کے نزدیک رہنے والوں کو کینسر کا خطرہ زیادہ ہوسکتا ہے، تازہ تحقیق ...
ایئرپورٹ کے نزدیک رہنے والوں کو کینسر کا خطرہ زیادہ ہوسکتا ہے، تازہ تحقیق میں ماہرین کا حیران کن اور پریشان کن انکشاف

  

برلن(مانیٹرنگ ڈیسک) جو لوگ شور والی جگہوں پر رہتے ہیں، نئی تحقیق میں سائنسدانوں نے ان کے لیے ایک انتہائی بری خبر سنا دی ہے۔ میل آن لائن کے مطابق چوہوں پر کی جانے والی اس تحقیق کے نتائج میں جرمنی کے سائنسدانوں نے بتایا ہے کہ جو لوگ ایئرپورٹس کے نزدیک یا دیگر ایسی جگہوں پر رہتے ہوں جہاں ٹریفک وغیرہ کا شوربہت زیادہ ہو ان کو کینسر لاحق ہونے کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے۔ آواز کی آلودگی لوگوں کے ڈی این اے کو تباہ کرتی ہے، ہائی بلڈپریشر کا سبب بنتی ہے اور کینسر کے ٹیومرز پیدا کرتی ہے۔

رپورٹ کے مطابق اس تحقیق میں یونیورسٹی میڈیکل سنٹر آف مینز کے سائنسدانوں نے چوہوں کو ہوائی جہازوں کی آواز کے زیراثر رکھا اور ان پر اس آواز کے اثرات کا معائنہ کیا۔ نتائج میں معلوم ہوا کہ جو چوہے پہلے سے ہائپرٹینشن کا شکار تھے آواز کی آلودگی نے ان کو کارڈیوویسکولر انفلیمیشن کا شکار بھی بنا دیا۔ چار دن تک اس آواز میں رہنے کے بعد لگ بھگ سبھی چوہوں میں ہائی بلڈ پریشر کا عارضہ بھی پیدا ہو گیا۔ تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ میتھیاس اوئلزے کا کہنا تھا کہ ”یہ چوہے ذہنی دباﺅ اور دیگر کئی طرح کے عارضوں کا بھی شکار ہو گئے تھے۔ جب ان کے دوبارہ ٹیسٹ کیے گئے تو ان کو کینسر لاحق ہونے کا خطرہ بھی کئی گنا بڑھ چکا تھا۔ ہائی بلڈ پریشر اور کینسر دنیا میں اموات کی بڑی وجوہات میں سے ایک ہے جو آواز کی آلودگی سے بھی تیزی سے پھیلتے ہیں۔“

مزید :

تعلیم و صحت -